Just Bliss

Posts Tagged ‘life

 

01. Refrain from sleeping between fajr and Ishraq, Asr and Maghrib, Maghrib and Isha.
——————————
02. Avoid sitting with smelly people. i.e (onion)
——————————
03. Do not sleep between people who talk bad before sleeping.
——————————
04. Don’t eat and drink with your left hand.
——————————
05. Don’t eat the food that is taken out from your teeth.
——————————
06. Don’t break your knuckles.
——————————
07. Check your shoes before wearing it.
——————————
08. Don’t look at the sky while in Salaat.
——————————
09. Don’t spit in the toilet.
——————————
10. Don’t clean your teeth with charcoal.
——————————
11. Sit and wear your trousers.
——————————
12. Don’t break tough things with your teeth.
——————————
13. Don’t blow on your food when it’s hot but u can fan it.
——————————
14. Don’t look for faults of others.
——————————
15. Don’t talk between iqamath and adhan.
——————————
16. Don’t speak in the toilet.
——————————
17. Don’t speak tales about your friends.
——————————
18. Don’t antagonize your friends.
——————————
19. Don’t look behind frequently while walking.
——————————
20. Don’t stamp your feet while walking.
21. Don’t be suspicious about your friends.
——————————
22. Don’t speak lies at anytime.
——————————
23. Don’t smell the food while you eat.
——————————
24. Speak clearly so others can understand.
——————————
25. Avoid travelling alone.
——————————
26. Don’t decide on your own but do
consult others who know.
——————————
27. Don’t be proud of yourself.
——————————
28. Don’t be sad about your food.
——————————
29. Don’t boast.
——————————
30. Don’t chase the beggars.
——————————
31. Treat your guests well with good heart.
——————————
32. Be patient when in poverty.
——————————
33. Assist a good cause.
——————————
34. Think of your faults and repent.
——————————
35. Do good to those who do bad to you.
——————————
36. Be satisfied with what you have.
——————————
37. Don’t sleep too much – it causes forgetfulness.
——————————
38. Repent at least 100 times a day (Istighfaar).
——————————
39. Don’t eat in darkness.
——————————
40. Don’t eat mouth-full.
——————————————-
‘Send to others to remind them’.
—————————————- -May Allah bless you…! Aameen.
——————————————
Love is real.
——————————————-
Why do we sleep in the masjid but stay awake in parties?
——————————————-Why is it so hard to talk to Allah but so easy to gossip?
—————————————— Why is it so easy to ignore a Godly text message but re-send the nasty ones?
—————————————–Are u going to send this to ur friends or are u going to ignore it?
——————————————Allah said: “if u deny me in front of ur friends, i will deny u on the day of Resurrection”
——————————————
——————————————-
If each muslim says astaghfirullah wa atubu ilaih 3 times now and forward, in a few seconds billions will have said it and You’ve got nothing to loose so pass on…..
[10/12 17:49] Huma F. Khan: MANNERS
“The Prophet (sal Allahu alaihi wa sallam) saw a man drinking standing up.
He said to him, ‘Hah!’
The man asked, ‘What’s the matter?’ He said, ‘Would you like it if a cat drank with you.’ He said, ‘No.’
He (sal Allahu alaihi wa sallam) said, ‘Someone worse than that was drinking with you – the Shaytaan.’”
[Ahmad; Majma al-Zawaa’id]
The Shaytaan drinks with a person if he drinks standing up.
Sit down to drink.
Abdullah Bin Masood رضي الله عنه narrates:
Rasulullaah صلى الله عليه وسلم said that
 When a person lies, the angels flee a mile away from him on account of the odour coming out from his mouth.
*[Tirmidhi 1972]*

 

Advertisements

girls_flowers_wal_02

1- aa.e to yuuñ ki jaise hamesha the mehrbān

bhūle to yuuñ ki goyā kabhī āshnā na the

***

1- She came  as if she’d been cordial forever

When overlooked; ignored as if she knew never

***************

2–aur bhī dukh haiñ zamāne meñ mohabbat ke sivā

rāhateñ aur bhī haiñ vasl kī rāhat ke sivā

*****

2–Besides allure are sorrows; that life provides
Comforts are more than love’s union provides

***************

3- aur kyā dekhne ko baaqī hai

aap se dil lagā ke dekh liyā

****

3– What’s further more is left to see now

I’ve experienced being in love with you

***************

4–dil nā-umiid to nahīñ nākām hī to hai

lambī hai ġham kī shaam magar shaam hī to hai

***

4–The heart is not hopeless, it’s just a failure

Though murky and long night; but only failure

****************

5– donoñ jahān terī mohabbat meñ haar ke

vo jā rahā hai koī shab-e-ġham guzār ke

****

5– Lost all wealth and values in thy love

He’s giving way gloomy life in thy love

**************

6– duniyā ne terī yaad se begāna kar diyā

tujh se bhī dil-fareb haiñ ġham rozgār ke

***

6–The world has made me forget you

Trials of life draw me more than you

*************
7–guloñ meñ rañg bhare baad-e-nau-bahār chale

chale bhī aao ki gulshan kā kārobār chale

***

7– Spring breeze is filled with flowers’ fragrance

Come love; let garden carry on its business

****************

8–ham parvarish-e-lauh-o-qalam karte raheñge

jo dil pe guzartī hai raqam karte raheñge

****

8 We’ll continue to nurture pen and paper

Whatever heart bears, we’ll write on paper

****************

9–ik fursat-e-gunāh milī vo bhī chaar din

dekhe haiñ ham ne hausle parvardigār ke

****

9 Got a way to enjoy relation for few days

Deplore to see god’s patience to allow stay

*************

10 kar rahā thā ġham-e-jahāñ kā hisāb

aaj tum yaad be-hisāb aa.e

***

10– While calculating tribulations during life

Remembered you today more than ever in life

***************

11– maqām ‘faiz’ koī raah meñ jachā hī nahīñ

jo kū-e-yaar se nikle to sū-e-daar chale

***
11 No place fascinated Faiz on his way

Going away from his beloved’s home

**************
12–na gul khile haiñ na un se mile na mai pī hai

ajiib rañg meñ ab ke bahār guzrī hai

***

12– Neither the flowers bloomed nor met beloved

What an out of the way, the spring is adhered

*************

13– na jaane kis liye ummīd-vaar baiThā huuñ

ik aisī raah pe jo terī rahguzar bhī nahīñ

***

13–Why am I waiting as an optimistic runner?

On the way that doesn’t even go thy manor

***************

14– tere qaul-o-qarār se pahle

apne kuchh aur bhī sahāre the

***
14– Before your promises and confessions

I had various friends and connections

**************

15– tumhārī yaad ke jab zaḳhm bharne lagte haiñ

kisī bahāne tumheñ yaad karne lagte haiñ

***
15– When agony of thy memory start to sink

In some way I remember you and think

***********

Rain in India

Remembering you in rainy season

Is my all time habit of rainy season!

Thinking to change habit in this rainy season

But downpour won’t stop by changing habits

To remember you, to miss you in rainy season

Is akin to breathing life

Breathing is verve and a sign of life

No automatic alt text available.

 

 

 

 

 

1806972-bigthumbnail

It was just time pass; it wasn’t loving affair

It wasn’t even agreed to live forever, affair

He agreed to me after revulsion; that’s true

He wasn’t hesitant to be in private, it’s true

I’ve no complain if she’s broken her promise

She was simply chum for a night; so no issue

Was with my all day long under blazing sun

She was wall’s shade; not a wall in the sun

What she got, achieved through unfair way

She didn’t deserve that post in any way

Why the birds left their babies on the tree

Was not an ally! The vulture near the tree

If you wish to know Najmi, study him cagily

He’s a book of life and not an evening paper
……………………………………………

ذرا سی دیر کی تفریح تھی بس پیار تھوڑی تھا
عمر بھر ساتھ رہنے کا کوئی اقرار تھوڑی تھا
یہ سچ ہے بات وہ میری بڑی مشکل سے مانا تھا
اسے خلوت میں ملنے سے کوئی انکار تھوڑی تھا
گلہ کیسا اگر اس نے کوئی پیمان توڑا ہے
مسافر تھا وہ شب بھر کا وہ رشتہ دار تھوڑی تھا
جھلستی دھوپ میں یوں تو وہ میرے ساتھ تھا دن بھر
مگر وہ سایہِ دیوار تھا دیوار تھوڑی تھا
ملی ہے جو سفارش سے کسی گمنام سازش سے
صدارت کی اُسے مسند تو وہ حقدار تھوڑی تھا
پرندے کیوں گئے تھے اُس شجر پر چھوڑ کر بچّے
وہاں اک گدھ جو بیٹھا تھا وہ چوکیدار تھوڑی تھا
سمجھنا ہو اگر نجمی کو پڑھنا خوب فرصت سے
کتابِ زیست تھا وہ شام کا اخبار تھوڑی تھا
………………….
الحاج نجمی کراچی پاکستان

fall-nature-animated-gif-20

The death itself brought news of life for me

I’m a vanishing lamp, death is infinity for me

No one pleased me and brought joy in my life

Why weep now, when I no longer breathe life

I’m curbed to a corner engulfed in my distress

Almighty nurtures me in my bliss and distress

O the pious worshiper! Garden of Eden for you

Hence being a sinner; woe of hell for me though

I would lighten as a candle if flourished brightly

But the ambiance wasn’t in my support actually

Every heart and soul wishes for the same for me

If the mortal turns to dust, it’ll be infinity for me

Mortal has magnetic charm towards dust Anis

Karbala is for me! I’ve to bear it with endurance

…………………………….

ḳhud naved-e-zindagī laa.ī qazā mere liye

sham-e-kushta huuñ fanā meñ hai baqā mere liye

zindagī meñ to na ik dam ḳhush kiyā hañs bol kar

aaj kyuuñ rote haiñ mere āshnā mere liye

kunj-e-uzlat meñ misāl-e-āsiyā huuñ gosha-gīr

rizq pahuñchātā hai ghar baiThe ḳhudā mere liye

tū sarāpā ajr ai zāhid maiñ sar-tā-pā gunāh

bāġh-e-jannat terī ḳhātir karbalā mere liye

naam raushan kar k kyūñkar bujh na jaatā misl-e-sham.a

nā-muvāfiq thī zamāne kī havā mere liye

har nafas ā.īna-e-dil se ye aatī hai sadā

ḳhaak tū ho jā to hāsil ho jilā mere liye

ḳhaak se hai ḳhaak ko ulfat taḌaptā huuñ ‘anīs’

karbalā ke vāste maiñ karbalā mere liye

19225143_10154588267416932_8043357261204906411_n

کوئی غالباً30برس پہلے کی بات ہے ۔ میں ایک نجی اسکول میں پرنسپل کے عہدے پر کام کررہی تھی۔
ان دنوں امریکہ کے ویزے کی خبر بہت گر م تھی۔مجھے کچھ معلوم نہیں تھا کہ حصول کا طریقہ کیا ہوتاہے ۔ ایدمنسٹریٹر صاحب اور اکاؤنٹنٹ بہت ذکر کرتے تھے ۔ایک دن میں نے بھی پوچھ لیا کہ آخر یہ ویزے کا چکر ہے کیا۔
دونوں نے مجھے کسی گنتی میں شمار نہ کرتے ہوئے بات بدل دی ۔ میں خاموش تو ہوگئی مگر ساتھ ہی شاکی اور دکھی بھی ۔ غریب ہیں تو کیا اسی دنیا کے باسی ہیں ۔ میں نے اِدھر اُدھر سے پتہ کیا تو معلوم ہوا لوگ ایک ایک ہفتے سے فرئیر ہال کے باغ میں اپنی باری کا انتظار کررہے ہیں کہ کب موقع ملے اور وہ انٹرویو کے لئے اند رجاسکیں ۔
ہم نے بھی تصویر کھنچوائی،فارم بھرا اور صبح سویرے امریکن ایمبیسی پہنچ گئی۔ جب میری باری آئی تو پرس کی چیکنگ ہوئی۔ پرس میں سے لپ اسٹک ،چابیاں ،ٹافیاں ،ریز گاری نکل کر فرش پر پھیل گئیں ۔عملے نے غنیمت جانا کہ خود ہی اٹھا کر دے دیں که کچھ مزید نایاب اشیاء فرش پر نہ پھیل جائیں ۔ بہرحال ہم تلاشی کے بعد ایک بہت بڑے ہال میں پہنچے ۔ بیٹھنے کے بعد جو نظر اٹھائی تو ایک سے ایک اسمارٹ اسٹائلش خواتین تھیں جو باری کی منتظر اس یقین کے ساتھ بیٹھی تھیں کہ نہ صرف ویزہ ان کو مل جائے گا بلکہ شاید وہیں سے وہ ائرپورٹ جائیں گی اور سیدھی امریکہ کی زمین پر ہی قدم رنجہ فرمائیں گی ۔قیمتی زیورات ہیروں کی انگوٹھیاں یعنی بس کیا کہوں کچھ کہا نہیں جائے ۔حضرات کا عالم یہ تھاکہ قیمتی بریف کیس قیمتی لباس میں ملبوس ہم جیسے لوگوں کو نگاہِ غلط ڈال کر منہ پھیر لیتے ۔
ہال کے آخر میں تین کھڑکیاں تھیں جن میں 3افراد بیٹھے تھے جو انٹرویو کررہے تھے ۔اکثر خواتین وحضرات ڈھیروں ڈاکومنٹس اور ٹیڑھے منہ سے انگریزی بولنے کے باوجود ناکام آرہے تھے ۔
ہم نے کھڑکی کے پیچھے 3مختلف چہروں کو دیکھ کر دل میں سوچا کہ اے مالکِ دوجہاں تو کتنے چہروں اور شکلوں میں جلوہ گر ہے ۔مجھے کس شکل میں ملے گا! سوچ ہی رہی تھی کہ نام پکاراگیا۔نہ میرا کوئی بینک بیلنس تھا نہ جائیداد نہ قیمتی لباس نہ اسٹائل۔ بس یہ سوچتی ہوئی کھڑکی پر گئی کہ انسان کی کیا مجال اگر اللہ نے دینا ہے تو دے دے گا ورنہ ہم تو اپنے آپ میں خو ش ہیں ۔دوچار سوالوں کے بعد ہی کہا گیا کہ شام کو پاسپورٹ لے لینا۔ ہم یہ بھی نہیں جانتے تھے کہ شام کو پاسپورٹ لینے میں کیا حکمت ہے ۔ بہت سے لوگوں کو اسی وقت مل گئے تھے ۔ خیر جی ،شام کو جو پاسپورٹ ملا تو اس میں ملٹی پل ویزہ لگا ہوا تھا جو رب کی مرضی۔
اسکو ل میں جب بتایا تو کوئی یقین نہ کرے کہ کیسے مل گیا! تو بھئی جو اس کی مرضی۔جانا تو تھا نہیں بس شوق اور چیلنج سمجھ کر کوشش کی اور حاصل کیا۔ یہ ضرور ہوا کہ لوگوں میں عزت سے دیکھنے جانے لگے کہ امریکہ کا ملٹپل ویزہ کے مالک تھے ۔ کافی برس گزرگئے اور کوئی خیال نہ آیا۔ مگر بھتیجے اکثر جب بھی فون کرتے توکہتے ایک دفعہ توآجائیں ۔ بیٹی کی شادی ہوچکی تھی، بیٹے کی بھی شادی ہوچکی تھی۔ چھوٹی بیٹی یونیورسٹی میں تھی۔ وہ جانتی تھی میں اس کی وجہ سے نہیں جاتی مگر خواہش بہت ہے ۔ لہذا اس نے ہمت دلائی کہ وہ اب بڑی اور سمجھ دار ہوگئی ہے میں اطمینان سے جاؤں۔
سو ہم نے ایک دفعہ پهر فارم بھرا۔ 1999 میں Fedex سے فارم اسلام آباد جاتے تھے ۔ تقریباً دس دن بعد انٹرویو کی تاریخ مل گئی۔ ہم اسلام آباد گئے ۔ اس دفع سوچا اسلام آباد میں انٹرویو ہے ، چلو ساڑھی پہن کر انٹرویو دیں گے ۔ رات کو تیار ی کرکے رکھ دی۔ صبح جب پہنا تو بلاؤز کی زپ ٹوٹ گئی ۔لوبھئ بهرم کا وہیں دم نکل گیا۔ رات کو جوکپڑے دهو کر لٹکائے تهے وہی الگنی سے اتار کر بغیر استری کے سلوٹوں والے پہن کر چلے گئے ۔ پیسہ جائیداد یا دستاویز تو کبھی همارے پاس ہوتی نہیں کیونکہ ہمیں یقین ہوتا ہے کہ اگر اللہ کو منظور هو تو ویزہ بغیر کسی حُجّت کے مل جائے گا۔ وہی ہوا۔۔ پانچ سال کا ملٹی پل ویزہ مل گیا۔ نہ سوال نہ جواب نہ حیرت نہ غیرت۔ اس دفعہ ہم واقعی امریکہ دیکھنے کیا اپنے بھتیجوں ،رشتہ داروں اور پیاری بھابھی سے ملنے چلے گئے ۔خرچہ بھی بھتیجے نے اٹھایا۔اللہ اسکو سب کے ساتھ سلامت رکھے ۔
\
پھر کچھ سال بعد دوبارہ شوق ہوا کہ چلو اس دفعہ بچوں کے ساتھ کوشش کرتے ہیں ۔ یقین کریں پانچ سال کا ملٹی پل ویزہ مل گیا مجھے اور بچو ں کو۔ مگر ایک ہفتے بعد ہی 9/11 کا واقعہ ہوگیا تو ہم نے کبھی نہ جانے کے ارادے سے توبہ کرلی ۔ جہاں اپنی عزت ہی نہیں تو کیوں جائیں ایسے ۔

میری ایک دوست نے کہا کہ تمہیں آرام سے ویزہ مل جاتا ہے اور مجھے کبھی نہیں ملتا۔میرے ساتھ چلو تمہیں بھی مل جائے گا اور مجھے بھی شاید مل جائے ۔ اس ملک میں اس کا شوہر گیا ہوا تھا نہ وہ آتا تھا اپنی کاروباری مصروفیت کی وجہ سے نہ اِس کو ویزہ ملتا تھا۔ خیر جی ہم بینک بیلنس شیٹ لے کر پہنچ گئے ۔ جب کھڑکی کے اس طرف بیٹھے ہوئے افسر نے میری بیلنس شیٹ دیکھی تو محو حیرت سے کبھی مجھے دیکھے کبھی شیٹ کو۔ آخر میں نے پوچھا: ’’کیا ہواآفیسر؟‘‘تو وہ بولا: ’’یہ بتاؤ،تمہار ی بیلنس شیٹ میں صرف= Rs1200/نظر آرہے ہیں ۔میں کیسے ویزہ دے سکتاہوں ؟‘‘پھر اِدھر اُدھر کی باتیں ہوتی رہیں ۔ٹیچر کی عزت ہر جگہ ہوتی ہے وہ بھی بہت مہذب لہجے میں بات کررہا تھا۔تھوڑی دیر بعدپھر اس نے کہاRs1200/=۔دیکھو یہ صرف Rs1200/=۔مجھے غصہ آگیا۔ میں نے کہا:’’آفیسر ،میری توہین نہیں کرو۔ تم نے بیلنس شیٹ مانگی تھی وہ دکھادی ۔میں بھی جانتی ہوں کہ کہیں بھی جانے کے لئے رقم درکار ہوتی ہے ۔میرے وسائل ہیں تو آئی ہو ں نا۔ ویزہ دیناہے تو ورنہ میری توہین نہیں کرو‘‘۔ معذرت کے بعد اگلے دن پھر بلایا۔میں پھر چلی گئی۔ میری دوست کو پہلے دن ہی انکار ہوگیا تھا۔ اگلے دن پھر اِدھر اُدھر کی باتیں کرتارہا۔۔ بولا:’’آج تک میں نے اتنا ٹائم کسی کو نہیں دیا یا ویزہ دے دیتاہوں یا انکار ہوجاتا ہے ۔اب تم بتاؤ میں کیا کروں !میری نوکری جائے گی اگر = Rs1200/پر ویزہ دیا‘‘۔ میں نے کہا،’’اچھا بتاؤ،میں کیا کروں ؟‘‘۔بولا :’’مجھے رقم لاکر دکھادو‘‘۔میں نے کہا:’’ٹھیک ہے ‘‘۔اگلے دن میرے رشتے دار ہیں ، وہ $4000 لے کر میرے ساتھ گئے ۔ دیکھ کر ہنسنے لگا۔بولا؛’’کہاں چھپا کر رکھے تھے؟‘‘
میں نے کہا ” یه تمهارا مسله نهیں هے که کہاں رکهے تهے ، تم نے کہا لا کر دکهاؤ تو دیکھ لو گِن بهی لو ”
پهر هنستے هوئے اس نے ویزہ دے دیا۔ مجھے تو جانا ہی نہیں تھا شوق پورا ہوگیا۔ کافی عرصے تک اس آفیسر سے ای میل پر رابطہ رہا۔ اچھا انسان تھا۔جہاں بھی ہو، خوش رہے ،آمین.
میں نے اپنی زندگی اس گانے جیسی گزاری هے –

~ میں زندگی کا ساتھ نبهاتا چلا گیا
هر فکر کو دهوئیں میں اڑاتا چلا گیا
بربادیوں کا سوگ منانا فضول تها
بربادیوں کا جشن مناتا چلا گیا
هر فکر کو دهوئیں میں اڑاتا چلا گیا
جو مل گیا اسی کو مقدر سمجھ لیا
جو کهو گیا میں اس کو بهلاتا چلا گیا
هر فکر کو دهوئیں میں اڑاتا چلا گیا
غم اور خوشی میں فرق نه محسوس هوں جہاں
میں دل کو اس مقام په لاتا چلا گیا
هر فکر کو دهوئیں میں اڑاتا چلا گیا

19203123-english-teacher-sitting-at-the-table-and-smiling-to-the-camera

The Seasons come and the seasons go

But the Season of memories never goes

It has undying settled deep in my heart

I remember I read it somewhere in a book

When you see new faces reflect in old faces

Old memories move with new full of life faces

I believe you are also one of those lost faces

Memory of fine old days, rising as new face

It‘s closer to me now; fading memories!

You know the fine days we spent together

It makes me sad to think of departing you

So keep myself engaged just to forget you

I write poetry and lyrics to keep occupied

I restrain to read, write and lost in books

Thy recollections sting me more in loneliness

And thy remembrance liven up in loneliness

Fragrance of beautiful memories relish me

The fragrance engulfs the ambiance and me

And I continue my life’s journey swiftly ——–

…………………………………………………..

یاد کہانی
موسم آتے جاتے ہیں
مگر یاد کا موسم نہیں گزرتا
عین دِل کے اوپر کہیں ٹھہر جاتا ہے
میں نے کسی کتاب میں پڑھا تھا
جب پُرانی شکلیں نئی شکلوں میں نظر آنے لگیں
تو پرانی یادیں نئے جیون کے ساتھ سفر کرنے لگتی ہیں
مجھے لگتا ہے شاید تم بھی
ایسی ہی کسی یاد کا چہرہ ہوا
سانولی یاد کا
جو میرے قریب آگیا ہے
کہ پرانی یادیں مٹنے لگی ہیں
تم سے جدائی کا موسم مجھے اُداس کرنے لگا ہے
تمہیں معلوم ہے
تمہارے ساتھ بیتے دِن بھلانے کے لیے
میں خود کو مصروف رکھنے کی کوشش کرتی ہوں
نظمیں لکھتی ہوں، شعر کہتی ہوں اور
کتابوں میں اپنا آپ گم کر لیتی ہوں
مگر دل پر ایسی تنہائی گزرتی ہے کہ
یاد کی اگر بتیاں آپ ہی آپ
سُلگ اٹھتی ہیں
جن کی خوشبو میرے چاروں اور پھیل جاتی ہے
دُور دُور تک
اور میں نہ چاہتے ہوئے بھی
اِس دھیمی سی خوشبو کے ساتھ
سفر کرنے لگتی ہوں !!
نجمہ منصور


Enter your email address to follow this blog and receive notifications of new posts by email.

Join 915 other followers

Archives

Archives

December 2017
M T W T F S S
« Nov    
 123
45678910
11121314151617
18192021222324
25262728293031

Shine On Award

Dragon’s Loyalty Award

Candle Lighter Award

Versatile Blogger Award

Awesome Blog Content Award

Inner Peace Award

Inner Peace Award

Inner Peace Award

Flag Counter

Flag Counter

It looks like the WordPress site URL is incorrectly configured. Please check it in your widget settings.

Bliss

blessings for all

Upcoming Events

No upcoming events