Just Bliss

Thank you so much  Chriti Moise  for nominating me for the Shine on award

These are rules to follow for this award :

1.) Show appreciation of the blogger who nominated you and link back to them in your post.
DONE !
2.) Add the award logo to your blog.
DONE !
3.) Share 7 things about yourself.
A few things about me you’ll find if you visit this blog or you can try here:)

4.) Nominate 5 – 10 or so bloggers you admire.

Seven things about me

 

 

Advertisements

 

Thank you Ajaytao for nominating me for the award

Seven thing about me

 

                               Related image

when dust is the destiny

why then , tussle, clash and quarrel

take handful of dust, hold and hug

shake hands with the one you

disagreeing; wasted whole yesterday

spent thy night sleepless and weeping

This dust———-!

is the only love bond between us

This dust———-!

is the faith of our ardent love

It’s our ritual of long gone eras

This dust—–!

is our past

is our present and

will be the day to come

why so solemn my beloved?

when I’m no more

don’t shed tears on this dust

don’t let it beholden

swear upon this dust and

let love be a divine pride

******
عشق کو تم سرخرو کردو

[ایک نظم

خاک ہی جب ہے مقدر

بھلا پھر روٹھنا لڑنا جھگڑنا کیا

اُٹھاو ہاتھ سے مٹی اسے چُومو

ملاو ہاتھ تُم اس سے

کہ جس سے رُو ٹھ کے

دن کل کا بس بیکار کاٹا تھا

گذاری تھی یونہی آنکھوں میں

ساری رات رو رو کر

یہی مٹی

ہمارے درمیاں واحد محبت ہے

یہی مٹی

ہمارے عشق کی زندہ امانت ہے

سبھی دیرنیہ قصوں کی روایت ہے

یہی مٹی

یہی ماضی

یہی ہے آج

اور پھر آنے والا کل

تو پھر رُوٹھی ہو کیوں جاناں

نہ ہو نگے جب تو

مٹی پر کبھی آنسو بہانا مت

اسے مقروض مت رکھنا

اسی کی قسم کھا کے

عشق کو تُم سُر خُرو کر دو

انور زاہدی

Image may contain: sky and outdoor

Cathedral Masjid of Cordoba-Spain

Amazing and beautiful things still exist!

The Mosque-Cathedral of Cordoba is the most important

monument of all the Western Islamic world, and one of the most

amazing in the world.

It is said that the place where Mosque-Cathedral of Cordoba is

nowadays was dedicated, from ancient times, to the religious

group of different divinities. The evolution of the “Omeya” style in

Spain is resumed in the history of the Mosque of Cordoba, as

well as other styles such as the Gothic, Renaissance and

Baroque of the Christian architecture.

During the Visigoth occupation, another building “San Vicente”

Basilic was constructed in the same place. This basilica, of

rectangular shape, was shared between Muslims and Christians

for a long period of time. After the Muslim enlargement, the

Basilic became property of Abdur Rahman I, who constructed the

first “Mosque Alhama” or main Mosque of the city. Nowadays,

some of the constructive elements of the Visigoth building are

included in the first part of Abdur Rahman I.

The Great Mosque has two different areas: the courtyard or

“arcade sahn“, where the “alminar” (minaret) is constructed

(beneath the Renaissance tower) by Abdur Rahman III, and the

“haram” or praying hall. The interior space consists of a forest of

columns and red and white arches giving a strong chromatic and

artistic effect. The site is divided into 5 different areas,

corresponding each one of them to the different expansions that

have occurred on it.

Image may contain: outdoor

Simple were the people; simple were their homes

large were the courtyards and fewer were rooms

The people moaned and sighed to see that house

with a wall built in courtyard to divide the house

How to resolve the bygone and existing plight

were mutually shared in village pergola site

Boys walked miles and miles to their schools

Now the nearby ones, were then far-off schools

If anyone of them got tired carrying his satchel

A friend always shared the load of his satchel

Promises were made solemnly to carry out

Whatever promised was loyally carried ou

To the beloved a letter he sent

A heart through which an arrow went

Yet, in coyness she would herself absent

Not that she didn’t know what he had meant

See how beauty abase from rich to poor in love

when lover asked of his history; he was the one above

***

سیدھے سادھے لوگ تھے پہلے، گھر بھی سادہ ہوتا تھا
کمرے کم ہوتے تھے اور ، دالان کشادہ ہوتا تھا

دیکھ کے وہ گھر گاؤں والے سوگ منایا کرتے تھے
صحن میں جو دیوار اٹھا کر آدھا آدھا ہوتا تھا

مستقبل اور حال کے آزاروں کے ساتھ نمٹنے کو
چوپالوں میں ماضی کی یادوں کا اعادہ ہوتا تھا

دکھ چاہے جس کا بھی ہو وہ ملک کر بانٹا جاتا تھا
غم تو آج کے جیسے تھے احساس زیادہ ہوتا تھا

لڑکے بالے میلوں پیدل پڑھنے جایا کرتے تھے
پاس ہے جو اسکول وہ پہلے دور افتادہ ہوتا تھا

تھک جاتا کوئی تو مل کر بوجھ کو بانٹا کرتے تھے
دوست نے دوست کا بستہ اپنے سر پر لادا ہوتا تھا

سوچ سمجھ کر ہوتے تھے تب ساتھ نبھانے کے وعدے
لیکن جو کر لیتے تھے وہ وعدہ، وعدہ ہوتا تھا

خط میں دل اور تیر بنا کر منت کرنی پڑتی تھی
یار بہت مشکل سے ملنے پر آمادہ ہوتا تھا

دیکھ حسن کس منصب سے لے آیا عشق فقیری تک
جس سے پوچھا اپنے دور میں وہ شہزادہ ہوتا تھا

احتشام حسن

Related image

Guess how chopsticks were invented? Well historians believe that as the Chinese population grew, people had to save cooking fuel. So they chopped food into small pieced so they would cook quicker, and these bite sized little pieces didn’t need knives…enter chopsticks. Wow.

Fast forward to the Zhou Dynasty (ca. 1046-256 BCE) and large areas of forest were being cleared, so fuel, such as firewood, was in short supply.  baking and boiling would take too long, so food was cut into small pieces and quickly stir-fried. Most dishes of that era involved some type of sauce, so using one’s fingers was impractical, not to mention pretty disgusting.  Chopsticks were the perfect solution – one could grab bits of meat, vegetables and rice with a pincer-type action, and dip it daintily in the sauce.

Another excellent piece of good timing for chopsticks related to the teachings of Confucius. Confucius felt it inappropriate to have a knife on the table. When stir fry cooking require the components to be cut up before they reach the pan, then knife at table not needed

مدینے کی روٹیImage result for images of roti
دسمبر کے آخری عشرے میں سفر حجاز کا مبارک سفر کیا۔ کیا رحمت! کیابرکت! کیا سماں!، کیا رونق! کیا محبت! کیا معجزے! اللہ ! اللہ – کیا میں! کیا میری بساط! اور کیا اللہ پاک کی کرم نوازیاں، سبحان اللہ- وہاں جاکر اس قدر خوشی ہوئ یہ دیکھ کرکہ اللہ پاک کی محبت میں کس قدر لوگ جوق در جوق لبیک اللہھم لبیک کا ورد کرتے چلے آرہے ہیں- اسی طرح Ummati رسول صلی اللہ علیہ وسلم کے حرم میں ہر علاقے، ہر مسلک، ہر قوم ، ہر زبان، ہر حیشیت، ہر فقہ کے لوگ بھنورں کی طرح پروانہ وار چلے آتے ہیں اور من کی مرادیں پارہے ہیں- نہ موسم کی فکر، نہ جگہ کی، نہ امیری، نہ اسیری، نہ غریبی، نہ مجبوری، نہ معذوری کوئ چیز رکاوٹ نہیں- یہ سب تو وہاں جاکر سبھی محسوس کرتے ہیں اور دل تشکر اور آنکھیں عقیدت سے فرش راہ ہوتی ہیں- مگر میں یہ دیکھ کر بہت روحانی خوشی محسوس کرتی تھی کہ اس قدر لوگ ہیں اور سب باوضو، لاکھوں فرزندان توحید پاک صاف اور باوضو ، چپہ چپہ پاک، ہر نفس پاک، ہر سانس پاک کیا یہ معجزہ نہیں- دونوں جگہ مکہ اور مدینہ میں روح سرشار رہتی- -بس جس چیز نے دل ہلا دیا وہ ہے روٹی کی ناقدری- سالن کے ساتھ روٹیاں مفت- روٹی بھی سائز میں اچھی خاصی بڑی، کوئ غریب روٹی لینے والا نہیں ملتا- سب کو پیسا چاہیے- پیسا مانگنے کے لیے ہر ملک سے گروہ کی شکل میں نظر آتے ہیں- مگر روٹیوں کو کچرے میں ڈالتے دیکھ کر روح کانپ جاتی تھی- روٹی کے چکر میں تو سارا جہاں کاروبار چلا رہا ہے اور ایسی جگہ روٹی اور رزق کی یہ بے حرمتی افسوس!
میں اس سفر میں کھانے کی بچی ہوئ دو روٹیاں تبرک کے طور پر ساتھ لے آئ ہوں- تھوڑی تھوڑی کرکے کبھی دودھ میں بھگو کر کبھی سالن میں کھاتی ہوں- مجھسے برداشت نہیں ہوا کہ رزق کو ضائع کردیا جائے- حکومت زائرین کی سہولت اور آسائش کے لیے ہر سامان مہیا کرتی ہے جو قابل تحسین ہے- مگر روٹی بھی اگر قیمتا” ملے شاید ضیاع میں کچھ کمی ہو جائے- اے رب العزت، اے قادر مطلق ہمیں معاف کردے آمین! کچھ چیزیں ہمارے دائرہ اختیار میں نہیں ، مگر شاید یہ میرے دل کی تکلیف دہ آواز ہے یہ کسی کے دل میں اتر جائے- اور اسکا کوئ سد باب ہو کے روٹی کی اس قدر بے حرمتی نہ ہو- ویاں اللہ کے گھر میں ٹنوں کے حساب سے روٹی ضائع ہوتی ہے کوئ لینے والا نہیں ہوتا-
ہم نے کئ لوگوں سے بات کرنے کی کوشش کی تو ایک بہت تکیف دہ جملہ سننے کو ملا وہ یہ تھا کہ پاکستانیوں کی فطرت نہیں بدل سکتی کہ وہ اپنا بچا ہوا ضرور دوسروں کو دیتے ہیں- حالانکہ ایسی بات نہیں تھی کہ بچا ہوا لوگوں کو دیتے تھے- بعض دفعہ دو، تین چیزیں آگئیں اور ایک چیز ہم نے چھوئ بھی نہیں’ پیک ہے، وہ بھی اگر دیتے ہیں تو کوئ لینے کو تیار نہیں ہوتا- تو یہ پاکستانی بلکہ میں تو اس بات پر بہت فخر کرونگی –کیونکہ پاکستانی ہونے کے ناطے ہم اپنے ساتھ لوگوں کو شامل کرنا چاہتے ہیں، ساتھ کھلانا چاہتے ہیں- ساتھ کھلانے سے برکت ہوتی ہے- اور ہم نہ اپنے آپ کو کمتر محسوس کرتے ہیں بلکہ ہمیں تو بہت فخر ہوتا ہے کہ ہمیں کوئ بلائے اور اپنے ساتھ کرے تو وہ آدھی روٹی بھی ہمارے لیے بہت قابل عزت اور قابل فخر بات ہوگی کہ اللہ پاک نے ہمیں کہاں کہاں سے عطا کیا ہے-

 

Image result for IMAGES OF COMPLAINING LOVER

Do you remember where did you leave me?

Standing here; and had gone away from me

I’m lying under the shade of the same tree

You went away leaving me by the well here

I was sure you’ll never return to meet here

You went away with the belief of no return

Longing to hear of thy foot steps to return

What a deserted place you positioned me

Weather changed signs you’d left behind

Symbols you put on abode leaving behind

No ray of light shed light on in any room

Where did you light the lamp in the home?

You held Najmi’s hand with warmness here

But deceivingly you moved out from here

27153072_570220546656458_164217405_n (1)

Image result for images of girl weeping in bed

Even today on freezing dark January night

My heart feels the frozen memories’ plight

The warmth of thy homely hands;

on my soul is thawing and melting

and from my eyes’ corners flowing

Memories fading and vanishing

The city’s cold and dry ambiance

Gets suddenly soggy and sopping

جنوری کی سرد اَندھیری راتوں میں!

**********************
آج بھی
جنوری کی سرد اندھیری راتوں میں
تیرے نرم گرم ہاتھوں کا لمس
میرا دل محسوس کرتا ہے
تو میری روح پر جمی
یادوں کی برف
پگھل کر
میری آنکھوں کے کناروں سے
بہنے لگتی ہے
یادوں کے نیلے چہرے دھلنے لگتے ہیں
اور شہر کی سرد اور خشک ہوا میں
نمی اچانک بڑھ جاتی ہے!

Advertisements

Enter your email address to follow this blog and receive notifications of new posts by email.

Join 923 other followers

Archives

Archives

February 2018
M T W T F S S
« Jan    
 1234
567891011
12131415161718
19202122232425
262728  

Shine On Award

Dragon’s Loyalty Award

Candle Lighter Award

Versatile Blogger Award

Awesome Blog Content Award

Inner Peace Award

Inner Peace Award

Inner Peace Award

Flag Counter

Flag Counter

It looks like the WordPress site URL is incorrectly configured. Please check it in your widget settings.

Bliss

blessings for all

Upcoming Events

No upcoming events