Just Bliss

Posts Tagged ‘sun

mountain-wallpaper-1920x1080-1011103

Life’s like gleaming moonlight in desert
Floating clouds on mountain peaks is life
Water flowing in the lagoons is vigor of life
Life is water’s itch in storm, dust and desert
Life is like dancing in pouring down rain
For Majnu life’s impulsive spellbound love
For Leila life means only Majnu’s ardent love
Life’s curb and thirst in the midst of desert
Life is suffocating and vague in gloomy night
Love, fervor, shovel and rock is Farhad’s nerve
Allure loveliness and luster is Sherin’s verve
Life’s poisonous sting for helpless lovely Heer
Spellbound tune is Ranjha’s haven and fervor
Life is engulfed in philosophical sphere
We’re adhered in life’s whirlpool sphere
Life is a game of meeting and parting away
Life is to earn be alive and then strive away
My life is thy fragrant rite at dusk and dawn
The Life is morning glory of the sun at dawn
Life is the beam of hope in the sheer darkness
Life is trust and assurance in day’s brightness
Life moves swiftly from morning to evening
Counting stars in beloved’s glamour in evening
Life is simply ambition in murky helplessness
Love and only love is eternal power of life
Life is oxygen for the fading breaths of life
Life is blooming fragrant essence of verve
I’m the life-force of blooming glowing verve
Life is simply the splendor of you and me

……………………………………….

زندگی
[ایک نظم]
زندگی صحرا میں رخشاں چاندنی کا نام ہے
کو ہ پر بادل ندی میں پانیوں کا نام ہے
زندگی طوفان ‘خاک اور دشت میں پانی کی چاہ
بارشوں میں رقص کرتی زندگی کا نام ہے
زندگی ہے قیس کی آنکھوں میں وحشت اور جذب
زندگی لیلی کے جسم و جاں میں مجنوں نام ہے
وسط صحرا پیاس اور اک حوصلہ ہے زندگی
زندگی شام غریباں میں دھو ئیں کا نام ہے
زندگی فرہاد کا تیشہ ‘جنُوں اور سنگ کوہ
زندگی شیریں کے حُسن بےبہا کا نام ہے
زندگی ہے ہیر کی بیچارگی اور زہر عشق
بانسری کی دُھن پہ رانجھا کی لگن کا نام ہے
اک وجودی فلسفے کے دائرے میں زندگی
اور محور میں ہیں ہم جس زندگی کا نام ہے
زندگی ہجر و فراق و وصل کے ہیں مرحلے
زندگی نان جویں کی جُستجو کا نام ہے
زندگی اک مشکبُو شام و سحر ہے تیری یاد
زندگی ہوتی طلوع صبح نو کا نام ہے
زندگی تاریکی شب میں بقائے زندگی
زندگی روشن سے دن میں زندگی کا نام ہے
صبح کرنا شام کا ہے زندگی کا یک روپ
رات میں اختر شماری زندگی کا نام ہے
زندگی لاچارگی میں رنگ عزم زندگی
عشق قائم عشق دائم زندگی کا نام ہے
زندگی ہے آکسیجن جاں بلب سانسوں کے نام

Advertisements

 

 

allah

  In ember, in candle, in moon, it’s Him in everything

  He’s in budding dawn, in the Sun; He’s in everything

  He’s in angels, jinns, fairies, spirits in human beings

He’s in all forms, all times. Almighty exists in everything

He’s Yusuf, He’s Zuleika, He’s Yaqoob He’s everywhere

He’s Kanaan, He’s Egypt, and He’s the only desired path

He’s the wayfarer, He’s guide, and He’s the desired path

He’s vagabond, He’s the one who is valor and precise

He’s allure, He’s lore, He’s adored, He’s is but precise

He’s the inspiration to love to adore and be proud of

He’s innocent, He’s furious, He’s sane and He’s insane

He’s saint, He’s dervish, He’s king and He’s sovereign

He’s spark in the granite O Zafar; and red color in ruby

By God, He is in everything, yes truly exists everywhere

 

white

 

It’s not the time to express; stay quiet

O folk! Be quiet, be low, and be quiet

Truth is noble yet, venom’s bowl awaits

Are you silly? Don’t be Socrates; be quiet

Truth is virtue! Better if someone else dies

Are you Mansoor, to be hanged? Be quiet

Lethem say; the sun revolves around earth

Let the sun spin around; better to be quiet

Suffocation in the party, satirical airs stab

Think, ponder and recollect, but stay quiet

Hot tears, cool sighs! How the heart feels?

Stroll! Don’t unveil conditions, just be quiet

Watch with eyes closed, keep self-poised

Follow  Insha ji, watch, muse and! Be quiet

کچھ کہنے کا یہ وقت نہیں۔ کچھ نہ کہو، خاموش رھو
اے لوگو خاموش رھو، ھاں اے لوگو خاموش رھو
سچ اچھا پر اس کے جلو میں، زھر کا ھے اک پیالہ بھی
پاگل ھو؟ کیوں ناحق کو سقراط بنو، خاموش رھو
حق اچھا ، پر اس کے لئے کوئی اور مرے تو اور اچھا
تم بھی کوئی منصور ھو جو سولی پر چڑھو، خاموش رھو
ان کا یہ کہنا سورج ھی دھرتی کے پھیرے کرتا ھے
سر آنکھوں پر سورج ھی کو گھومنے دو، خاموش رھو
مجلس میں کچھ حبس ھے اور زنجیر کا آھن چبھتا ھے
پھر سوچو، ھاں پھر سوچو،ھاں پھر سوچو، خاموش رھو
گرم آنسو اور ٹھنڈی آھیں، من میں کیا کیا موسم ھیں
اس بگیا کے بھید نہ کھولو، سیر کرو، خاموش رھو
آنکھیں موند کنارے بیٹھو، من کے رکھو بند کواڑ
انشاءجی سے دھاگا لو، لب سی لو، خاموش رھو
(ابن انشاء)

 

2b4ce848fd4ddcd1b81f62969f50898e

Poet: Iftekhar Bukhari
Translated by: Tanveer Rauf

Before I’m gone astray in missing you
In deep fog of your remembrance
Like any lost star that you look for again
I want to get out of ecstatic shackled time
Remembering you and beautiful spent time
Murmuring in busted words in my dream
I love that time where you come into sight
Your agitated sensation flows in my blood
I try to find solace in night’s isolation
Her solitude scares me of being so afar
As a scared bird in nest in downpour
I can’t give dreadful omen to the mirrors
As they all fall back on me ———–!
I imagine of my death that where I die?
With a forlorn heart on a high mountain
Or anywhere in a shadowy weird corner
Or amidst the frightening ancient graves
Where weary sinners walk bare footed
In search of god and upright way of life
I don’t wish to be laid in a grand tomb
That holds feet of persons walking by
I wish to sleep in darkness of eternity
To let my restive soul at tranquility
The sun sets under white slabs of snow
In a lonely lane in broken down home
Where the moon sheds no tears and
From where thy memory has departed

…………………………………………………..
ہ ہ ہ ہdosri yaad
اس سے پہلے کہ میں ڈوب جائوں
تمہاری جدائی کے بے انت کہرے میں
کسی فراموش ستارے کی طرح
اور تم دوبارہ تلاش کرنے لگو
میرے لکنت زدہ لفظوں کی نیند میں
عہد رفتہ کی گرد آلود آوازیں
جن میں تمہارے خوابوں کے خد و خال بھٹکتے ہیں
میں اس مہذب جہنم سے نجات چاہتا ہوں
جس سے میں محبت کرتا ہوں
جس کی وحشت میرے لہو میں بہتی ہوئی آتش ہے
میں پناہ ڈھونڈتا ہوں رات کی نیلگوں تنہائی میں
جس کا پار درشک خالی پن مجھے لرزا دیتا ہے
بارش میں، گھونسلے میں سہمی ہوئی چڑیا کی طرح
میں آئینوں کو بد دعائیں نہیں دے سکتا
کہ وہ مجھ پر پلٹ آتی ہیں
میں سوچتا ہوں میں کہاں مروں گا
اپنے اداس دل میں کسی بلند پہاڑ پر
یا نشیب میں کسی بھولے بسرے کونے میں
دنیا کی حقیر ترین قبروں کے درمیان
جہاں تھکے ماندے گناہ گار
ننگے پائوں چلتے ہیں خدا کی جانب
میں کسی شاندار مقبرے کا آرزو مند نہیں
جو راہ گیروں کے قدم روک لے
میری پر حسرت روح
فقط ابدی اندھیرے کا آرام چاہتی ہے
سورج کی منجمد لاش کے پاس
برف کی سفید چادروں کے نیچے
ویران گلی میں،
جہاں چاند آنسو نہیں ٹپکاتا
خستہ مکان میں،
جہاں سے تمہاری یاد ہجرت کر چکی ہے
افتخار بخاری

5-couple

Whatever is coupled with thy name?

Gale, moon, stars, sun, fragrance

Love enlivens with your existence

May it be drizzle, autumn or spring!

تمہارے نام سے منسوب ہو جو
ہوا’سورج’ستارے’چاند’خوشبو
تمہارے نام سے ہے عشق قائم
خزاں’برسات’ ہو یا فصل گل ہو
انور زاہدی

Clout of doubt———

Again at night I,
Like the setting Sun,
Churned in my blood’s fire
Absurdly to clutch the moon

An agitated ray of seven colors
Crept from the valley of speaking shadows
Hid in the bosom of a dewdrop,
On the floor of a resting twig

———–bosom of dewdrop
Became a hell of roaring seven colors

This roaring hell of seven colors,
Got into my heart, my blood;
Altering the moment of fire
I touched the moon at last

Moon but was not candle of pang
Nor a city of desires
The moon was a murky stone
Was frozen blood————-!

Poetry by Ahmed Shamim
Translated by
Tanveer Rauf!


Enter your email address to follow this blog and receive notifications of new posts by email.

Join 910 other followers

Archives

Archives

November 2017
M T W T F S S
« Oct    
 12345
6789101112
13141516171819
20212223242526
27282930  

Shine On Award

Dragon’s Loyalty Award

Candle Lighter Award

Versatile Blogger Award

Awesome Blog Content Award

Inner Peace Award

Inner Peace Award

Inner Peace Award

Flag Counter

Flag Counter

It looks like the WordPress site URL is incorrectly configured. Please check it in your widget settings.

Bliss

blessings for all

Upcoming Events

No upcoming events