Just Bliss

Posts Tagged ‘Laila

mountain-wallpaper-1920x1080-1011103

Life’s like gleaming moonlight in desert
Floating clouds on mountain peaks is life
Water flowing in the lagoons is vigor of life
Life is water’s itch in storm, dust and desert
Life is like dancing in pouring down rain
For Majnu life’s impulsive spellbound love
For Leila life means only Majnu’s ardent love
Life’s curb and thirst in the midst of desert
Life is suffocating and vague in gloomy night
Love, fervor, shovel and rock is Farhad’s nerve
Allure loveliness and luster is Sherin’s verve
Life’s poisonous sting for helpless lovely Heer
Spellbound tune is Ranjha’s haven and fervor
Life is engulfed in philosophical sphere
We’re adhered in life’s whirlpool sphere
Life is a game of meeting and parting away
Life is to earn be alive and then strive away
My life is thy fragrant rite at dusk and dawn
The Life is morning glory of the sun at dawn
Life is the beam of hope in the sheer darkness
Life is trust and assurance in day’s brightness
Life moves swiftly from morning to evening
Counting stars in beloved’s glamour in evening
Life is simply ambition in murky helplessness
Love and only love is eternal power of life
Life is oxygen for the fading breaths of life
Life is blooming fragrant essence of verve
I’m the life-force of blooming glowing verve
Life is simply the splendor of you and me

……………………………………….

زندگی
[ایک نظم]
زندگی صحرا میں رخشاں چاندنی کا نام ہے
کو ہ پر بادل ندی میں پانیوں کا نام ہے
زندگی طوفان ‘خاک اور دشت میں پانی کی چاہ
بارشوں میں رقص کرتی زندگی کا نام ہے
زندگی ہے قیس کی آنکھوں میں وحشت اور جذب
زندگی لیلی کے جسم و جاں میں مجنوں نام ہے
وسط صحرا پیاس اور اک حوصلہ ہے زندگی
زندگی شام غریباں میں دھو ئیں کا نام ہے
زندگی فرہاد کا تیشہ ‘جنُوں اور سنگ کوہ
زندگی شیریں کے حُسن بےبہا کا نام ہے
زندگی ہے ہیر کی بیچارگی اور زہر عشق
بانسری کی دُھن پہ رانجھا کی لگن کا نام ہے
اک وجودی فلسفے کے دائرے میں زندگی
اور محور میں ہیں ہم جس زندگی کا نام ہے
زندگی ہجر و فراق و وصل کے ہیں مرحلے
زندگی نان جویں کی جُستجو کا نام ہے
زندگی اک مشکبُو شام و سحر ہے تیری یاد
زندگی ہوتی طلوع صبح نو کا نام ہے
زندگی تاریکی شب میں بقائے زندگی
زندگی روشن سے دن میں زندگی کا نام ہے
صبح کرنا شام کا ہے زندگی کا یک روپ
رات میں اختر شماری زندگی کا نام ہے
زندگی لاچارگی میں رنگ عزم زندگی
عشق قائم عشق دائم زندگی کا نام ہے
زندگی ہے آکسیجن جاں بلب سانسوں کے نام

Laila-kita-sawal-mian-majnun-nu-teri-laila-te-rang-di-kali-aye

Laila by Baba Bullah Shah

Laila indicated Majnu that
His beloved Laila has black skin
Majnu the lover retorted her back;
‘Thou vision is inept to apprehend,
Paper of holy Quran is however white
Yet words written are, is with black ink
Stop thinking more about it Bullihiya
It matters not if beloved is white or black

 

Laila kitta sawal mian majnu nu
Teri Laila de rung te kali ai
Ditta jawab mina majnu nay
Teri ankh na wekhan wali hay
Quran pak de war chittay
Uttay likhi siyahi kali ai
Chad we bullhiya dil di chad we
Te ki kali ki gori ai

…………………………………………….

Bulleh Shah‘s real name was Abdullah Shah, was a Punjabi Muslim Sufi poet, a humanist and philosopher.
Bulleh Shah received his early schooling in Pandoke, and moved to Kasur for higher education.
Bulleh Shah’s family directly descended from the Prophet Muhammad (PBUH).
Bulleh Shah lived in the same period as the famous Sindhi Sufi poet, Shah Abdul Latif Bhatai
His lifespan also overlapped with the legendary Punjabi poet Waris Shah of Heer Ranjha fame, and the famous Sindhi Sufi poet Abdul Wahad known by his pen-name, Sachal Sarmast (“truth seeking leader of the intoxicated ones”).
Amongst Urdu poets, Bulleh Shah lived 400 miles away from Mir Taqi Mir (1723 – 1810) of Agra.
–Bulleh Shah’s popularity stretches uniformly across Hindus, Sikhs and Muslims, to the point that much of the written material about this philosopher is from Hindu and Sikh authors.
He was a keen supporter of poor and at all fronts he opposed oppression and exploitation of public by capitalistic class. Due to his anti-extremist and revolutionary behavior, he was given the ‘Fatwa’ of Kafir (Infidel) by religious authorities. Several times, he was bitten or beaten by the extremists but ‘he never bowed his neck’.
When he died he was thrown on the garbage outside the boundary of Kasur because he wasn’t allowed to be buried in the Kasur. But as the time passed, Baba ji’s grave got its place in his Kasur.

After the death of Baba Bulleh Shah, the Government and Muslim Ulmas used their force strongly to destroy the Kalam (poetry) and reputation of Baba ji.
In British India, for about 100 years his Kalam was not allowed to be published. It was after the ‘partition of 1947’ that Baba ji’s Kalam was published for the first time, when some Sikhs and Hindus disclosed some remnants of Baba ji’s Kalam. No doubt, a lot of his verses have been disappeared from the world but still we’ve his beautiful verses which are famous all over the world and people of all castes and religions love and admire this remarkable poet of history.
May his pious soul be elevated more to higher grade of jannat —- ameen

بلھے شاہ بلھے شاہ کا اصل نام عبداللہ شاہ تھا، یہ ایک پنجابی مسلم صوفی شاعر، ایک انسان دوست اور فلسفی تھے۔ بلھے شاہ نے ایک چھوٹے سے گاؤں پندوکی میں ابتدائی تعلیم حاصل کی، اور اعلی تعلیم کے لئے قصور میں منتقل ہو گئے- بلھے شاہ کے خاندان کا سلسلہ براہ راست رسول اللہ (ص) سے ملتا ہے- بلھے شاہاس دور میں رہے جو سندھ کے مشہور صوفی شاعر شاہ عبدالطیف Bhatai اور افسانوی پنجابی شاعر ہیر رانجھاکی شہرت پانے واکے وارث شاہ، اور سندھ کے مشہور صوفی شاعر عبد Wahad ان کے عہد کے نام سے جانا جاتا تھا، سچل سرمست جو ( “نشہ والوں میں حقیقت کی تلاش رہنے والے”) کے سے پہچانے جاتے تھے – بھلے شاہ آگرہ آگرہ سے تقریباً 400 میل دور رہتے تھے جہاں مشہور اردو شاعروں یعنی میر تقی میر (1810 1723) سے 400 کا دور تھا- بھلے شاہ کی مقبولیت کو ہندو اور سکھ مصنفین کی طرف سے زیدہ پزیرائی ہوئی اس لئیے کہ اس فلسفی کے بارے میں لکھا کلام کا زیادہ حصہ فلسفانہ نقطہ پر مبنی ہے جو ہندوؤں، سکھوں اور مسلمانوں بھر میں یکساں طور پر پھیلا. وہ غریب طبقے کے گہرے حامی تھے اور تمام محاذوں پر وہ سرمایہ دارانہ طبقے کی طرف سے جبر اور عوام کے استحصال کی مخالفت کرتے رہے۔ ان مخالف انتہا پسند اور انقلابی رویے کی وجہ سے، انہیں مذہبی حکام کی طرف سے کافر (کافر) کا “فتوی’ بھی دیا گیا تھا. کئی بار انتہا پسندوں کی طرف سے پیٹا لیکن ‘اس نے اپنی گردن جھکا کر ہار کبھی کبھی نہیں’ مانی. انُکے انتقال کے بعد انہیں نے قصور میں دفن کرنے کی اجازت نہیں دی گئی ہے اور انہیں قصور کی سرحد کے باہر ردی کی ٹوکری پر پھینک دیا گیا. لیکن وقت گزر رہا تھا، بابا جی کی قبر کو اس کے شہر قصور میں آخر اس کی جگہ مل ہی گئی. بابا بلھے شاہ کی موت کے بعد، حکومت اور مسلم علماء نے کلام (شاعری) اور بابا جی کی ساکھ کو تباہ کرنے کی کوشش کی اور سختی سے ان کی اطلاق پر طاقت کا استعمال کیا. برطانوی بھارت میں، تقریبا 100 سال تک ان کے کلام شائع کرنے کی اجازت نہیں تھی. یہ 1947 ء کی تقسیم کے بعد بابا جی کے کلام کو پہلی بار دوبارہ شائیع کیا گیا- کچھ سکھوں اور ہندوؤں نے بابا جی کے کلام کی کچھ باقیات اور انکشاف جو کہ پہلے شائع کے گئیے تھا انہیں یکجا کیا – کوئی شک نہیں، اس کی آیات میں سے بہت کچھ حصہ دنیا کی نظروں سے غائب ہو گیا ہے لیکن اب بھی وہ ساری دنیا میں مشہور ہیں – ان کا کلام آج بھی تمام ذاتوں اور مذاہب کے لوگوں میں بہت مقبول ہے۔ اللھ انُکیُمغفرت کرے اور جنت میںُانُکے درجات کو بلند کرے ۔ آمین

beautiful-black-woman

Laila by Baba Bullah Shah

Laila indicated Majnu that
His beloved Laila has black skin
Majnu the lover retorted her back;
‘Thou vision is inept to apprehend,
Paper of holy Quran is however white
Yet words written are, is with black ink
Stop thinking more about it Bullihiya
It matters not if beloved is white or black

Laila kitta sawal mian majnu nu
Teri Laila de rung te kali ai
Ditta jawab mina majnu nay
Teri ankh na wekhan wali hay
Quran pak de war chittay
Uttay likhi siyahi kali ai
Chad we bullhiya dil di chad we
Te ki kali ki gori ai


Enter your email address to follow this blog and receive notifications of new posts by email.

Join 887 other followers

Archives

Archives

July 2017
M T W T F S S
« Jun    
 12
3456789
10111213141516
17181920212223
24252627282930
31  

Shine On Award

Dragon’s Loyalty Award

Candle Lighter Award

Versatile Blogger Award

Awesome Blog Content Award

Inner Peace Award

Inner Peace Award

Inner Peace Award

Flag Counter

Flag Counter

It looks like the WordPress site URL is incorrectly configured. Please check it in your widget settings.

Bliss

blessings for all

Upcoming Events

No upcoming events