Just Bliss

Posts Tagged ‘Iftekhar Bukhari

 

6951957-girl-looking-out-the-window

Getting up, I opened the window

And I see———

The astray lanes of the universe

A bright day dropped from a donor’s

Pocket in the bowl of the earth

Is now a low-spirited day of my life

But it is after all now my life

Its slowest day of my earthly life

A child’s ‘Lucky Draw” echo in the lane

Breeches silence of tedium far and wide

This day is my day——yeah it’s my day

Only if I make it or break it, it’s my day

ں:
’’میں اْٹھ کے کھڑکی کھولتا ہوں
اوردیکھتا ہوں
کائنات کی گلی گلی بھٹک رہی
زمین کے کاسۂ گدائی میں
کسی سخی کی جیب سے
گرا ہوا چمکتا دن
جواَب مری بجھی بجھی سی
زندگی بھی ہے
یہ میری عمرِمختصرکا اک طویل دن
گلی میں ایک ’’طفلِ لاٹری فروش‘‘ کی صدا
قریب و دور کی
تھکی تھکی خموشیوں کو
چیرتی ہے ’’یا نصیب! یا نصیب!‘‘
ہاں یہ دن مرا نصیب ہے
اگر میں داؤ پر لگا سکوں

img_97051

main-qimg-0364076d9782d2132a96af3b9beb785e-c

He’s very concerned of poor children

Starving, fading and dying children

Thus he travels far and wide for them

Then takes images of their melancholy

To display in most expensive hotels

To sell those photos to fine art lovers

Who consume food like monsters!
عظیم فن کار
ہ ہ ہ ہ ہ ہ ہ
اسے بھوک سے مرتے
مریل بچوں کا
بہت خیال رہتا ہے
طویل سفر کرکے
ان کی تصویریں بناتا ہے
مہنگے ترین ہوٹلوں میں
نمائش کا اہتمام کرتا ہے
جہاں وہ اور اس کے
فن کے قدر دان
حیوانوں کی طرح
خوراک نگلتے ہیں.

 

kristin-scott-thomas

No relationship ever remains forever

Who to nag, one doesn’t remain self ever

One then starts conversing with oneself

        As he can’t live long in aloofness always

What a friend! Walks along in trying time

Moves aside when sees some relief for me

Some incidents in life do happen; though

                                             life’s saved but the man isn’t alive though

I do sometimes go to my heart’s chamber

But no resident’s dwelling there like me

(this poetry is composed and sung by Jaswinder Singh

https://m.facebook.com/story.php?story_fbid=1745970862396594&id=100009510923569&__mref=message_bubble

غزل 
ہ ہ ہ 
ہمیشہ تو زمانے میں کوئی رشتہ نہیں  رھتا 
کسی سے کیا گلہ، خود آدمی اپنا نہیں  رھتا

پھر اپنے آپ سے اک گفتگو سی چل نکلتی ہے 
کوئی انساں زیادہ دیر تک تنہا نہیں  رھتا

عجب ساتھی ہے، دکھ کی دھوپ میں بس ساتھ چلتا ہے 
کہیں سایہ ذرا آئے تو پھر سایہ نہیں  رھتا

کچھ ایسےحادثے بھی زندگی میں ھوتے دیکھے ہیں 
کہ انساں بچ تو جاتا ھے مگر زندہ نہیں  رھتا

میں اپنے دل کے دروازے پہ اکثر اب بھی جاتا ھوں 
مگر اس گھر میں اب کوئی مرے جیسا نہیں  رھتا
 

( افتخار بخآری )

 

 

mirror

خود اپنا کفن بننے پہ مامور ہے دنیا
جیتے ہیں مگر جینے کی فرصت نہیں ہوتی
1. Everyone is busy weaving own shroud in life
Though alive but no time to be vibrant in life
…………………….

ملتے ہیں ہم ان سے بھی ترے واسطے دنیا
جن سے ہمیں ملنے کی ضرورت نہیں ہوتی
2. We meet the ones as a tradition of Life
We don’t really need, seeing them in life
………….
آئنوں کے نگر تجھ میں رہتے ہوئے
خود کو دیکھے ہوئے اک زمانہ ہوا
3.Living all through out in city of mirrors
Been long time I saw myself in a mirror
………………………………

سمجھ جاتا ہوں لیکن دیر سے سب دائو پیچ اس کے
وہ بازی جیت لیتا ہے مرے چالاک ہونے تک
4.I realize her pricks and tricks but a bit later
She wins the triumph before I get cleverer
………………..
آئنہ دیکھا تو اس بھول کا احساس ہوا
میں سمجھتا تھا فقط تجھ کو بھلا رکھا ہے

5.Seeing reflection in the mirror I realized
It’s not you I missed, its epoch, I realized
………………..
کچھ ایسے حادثے بھی زندگی میں ہوتے دیکھے ہیں
کہ انساں بچ تو جاتا ہے مگر زندہ نہیں رہتا
6.Seen some incidents happen in life
A guy recovers but never alive all life

 

wooden-hut

 

Roving in land of desires got me nothing

I gave nothing to anyone so I got nothing

Tw’s sheer fake that bloomed in darkness

Beyond my being, the light gave nothing

Isn’t it bounteous, am given wish, for life?

How can I say that life gave me nothing?

All, sovereigns and beggars turned to dust

Self-importance or timidity repaid nothing

It’s known that agony of parting is ecstatic

Your amity left no scars no pain, nothing

iftekhar

 

2b4ce848fd4ddcd1b81f62969f50898e

Poet: Iftekhar Bukhari
Translated by: Tanveer Rauf

Before I’m gone astray in missing you
In deep fog of your remembrance
Like any lost star that you look for again
I want to get out of ecstatic shackled time
Remembering you and beautiful spent time
Murmuring in busted words in my dream
I love that time where you come into sight
Your agitated sensation flows in my blood
I try to find solace in night’s isolation
Her solitude scares me of being so afar
As a scared bird in nest in downpour
I can’t give dreadful omen to the mirrors
As they all fall back on me ———–!
I imagine of my death that where I die?
With a forlorn heart on a high mountain
Or anywhere in a shadowy weird corner
Or amidst the frightening ancient graves
Where weary sinners walk bare footed
In search of god and upright way of life
I don’t wish to be laid in a grand tomb
That holds feet of persons walking by
I wish to sleep in darkness of eternity
To let my restive soul at tranquility
The sun sets under white slabs of snow
In a lonely lane in broken down home
Where the moon sheds no tears and
From where thy memory has departed

…………………………………………………..
ہ ہ ہ ہdosri yaad
اس سے پہلے کہ میں ڈوب جائوں
تمہاری جدائی کے بے انت کہرے میں
کسی فراموش ستارے کی طرح
اور تم دوبارہ تلاش کرنے لگو
میرے لکنت زدہ لفظوں کی نیند میں
عہد رفتہ کی گرد آلود آوازیں
جن میں تمہارے خوابوں کے خد و خال بھٹکتے ہیں
میں اس مہذب جہنم سے نجات چاہتا ہوں
جس سے میں محبت کرتا ہوں
جس کی وحشت میرے لہو میں بہتی ہوئی آتش ہے
میں پناہ ڈھونڈتا ہوں رات کی نیلگوں تنہائی میں
جس کا پار درشک خالی پن مجھے لرزا دیتا ہے
بارش میں، گھونسلے میں سہمی ہوئی چڑیا کی طرح
میں آئینوں کو بد دعائیں نہیں دے سکتا
کہ وہ مجھ پر پلٹ آتی ہیں
میں سوچتا ہوں میں کہاں مروں گا
اپنے اداس دل میں کسی بلند پہاڑ پر
یا نشیب میں کسی بھولے بسرے کونے میں
دنیا کی حقیر ترین قبروں کے درمیان
جہاں تھکے ماندے گناہ گار
ننگے پائوں چلتے ہیں خدا کی جانب
میں کسی شاندار مقبرے کا آرزو مند نہیں
جو راہ گیروں کے قدم روک لے
میری پر حسرت روح
فقط ابدی اندھیرے کا آرام چاہتی ہے
سورج کی منجمد لاش کے پاس
برف کی سفید چادروں کے نیچے
ویران گلی میں،
جہاں چاند آنسو نہیں ٹپکاتا
خستہ مکان میں،
جہاں سے تمہاری یاد ہجرت کر چکی ہے
افتخار بخاری

 

images

 Where do the heartaches go mother?

Where at all they go———-

When the hearts become dust

Get vanished in their own dust

When the seasons are wrapped

In the murky gloomy stillness

Where do the heartaches go?

Where at all they go———-

Heart aches disappear so is grief

However the life moves on

Days and nights pass on

We do not continue living

Where do the heartaches go mother?

Where at all they go———-

Youth converts to old and quietness

The eyes are converted into lifeless

Melody of lost songs faded away

Music, melody, and spirit fade away

Where do the heartaches go mother?

Where at all they go———

ایک بھولے گیت کی چند سطریں

درد کہاں جاتے ہیں مائی !
درد کہاں جاتے ہیں

جب دل مٹی ہو جاتے ہیں
اپنی دُھول میں کھو جاتے ہیں
قبروں کی کالی خاموشی
اوڑھ کے موسم سو جاتے ہیں

درد کہاں جاتے ہیں مائی !
درد کہاں جاتے ہیں

دل نہیں رہتا غم نہيں رہتے
رہنے والے کم نہيں رہتے
راتیں آتی ہیں جاتی ہیں
پر راتوں میں ہم نہيں رہتے

درد کہاں جاتے ہیں مائی !
درد کہاں جاتے ہیں

عمریں سُونے گھر جاتی ہیں
آنکھیں خآک سے بھر جاتی ہیں
بھولے گیتوں کی آوازیں
دھوپ میں پیاسی مر جاتی ہیں

درد کہاں جاتے ہیں مائی !
درد کہاں جاتے ہیں


Enter your email address to follow this blog and receive notifications of new posts by email.

Join 886 other followers

Archives

Archives

August 2017
M T W T F S S
« Jul    
 123456
78910111213
14151617181920
21222324252627
28293031  

Shine On Award

Dragon’s Loyalty Award

Candle Lighter Award

Versatile Blogger Award

Awesome Blog Content Award

Inner Peace Award

Inner Peace Award

Inner Peace Award

Flag Counter

Flag Counter

It looks like the WordPress site URL is incorrectly configured. Please check it in your widget settings.

Bliss

blessings for all

Upcoming Events

No upcoming events