Just Bliss

Posts Tagged ‘sword

Related image

He casually  waved  the sword in the air

I was all into dust ; my turban  in the air

Painful  moan sneaked of heart being hurt

I listened to the sighs for long  in the air

Loaded with flowers passed down the lane

Entire  ambiance spread fragrance in the air

Spent entire life in dreaming of a dwelling

A dwelling having walls, doors and  in the air

Heart when heaves sigh, the smog wells up

The smog creates metaphors then in the air

She let loose her hair in courtyard stylishly

Hair fragrance spread everywhere in the air

س نے تھی چلائی یونہی تلوار ہوا میں

تھا خاک نشیں مَیں مری دستار ہوا میں

آوازِ بزن ؛ دل پہ لگی چوٹ سے نکلی

تادیر مَیں سنتا رہا جھنکار ہوا میں

پھولوں سے لدا گزرا ہے وہ شوخ ، گلی سے

خوشبو کی طرح بکھرے ہیں آثار ہوا میں

اُس گھر کے تخیّل میں ہے اک عُمر ِبتائی

ہیں جس کے دریچے ، در و دیوار ہوا میں

اٹھتا ہے دھواں دل سے تو اُس اٹھتے دھویں سے

تصویریں بنی جاتی ہیں بیکار ہوا میں

دالان میں جُوڑے کو بڑے ناز سے کھولا

اور پھیل گئی بالوں کی مہکار ہوا میں

images (2)

Have nothing to do but to love my idol

I adore my own worshiping place of love

I’m edgy each moment without my idol

O! Faith where do you look for my love

No manor but my heart’s home for love

To enchant any heart, one needs to love

To beget love, its fine approach to love

  One can’t live if she cast a glance at him

After gaze no sword needed to slay him

Setting, flora, goblets and crimson liquor,

All charm of leisure except for the beloved

What a pity, spring is passing away swiftly

 Helpless of me, beloved doesn’t lend a hand

She was considerate till I bestowed my heart

After that disrespect and breaking of my heart

My days and nights are spent in thy casualness

It’s not at all sound love, of your negligence

Never come in with an immoral intention Niaz

It’s a not a public crossroad but a way to heart

کافر عشق ہوں میں بندہ اسلام نہیں
بت پرستی کےسوا اور مجھے کام نہیں

عشق میں پوجتا ہوں قبلہ و کعبہ اپنا
اک پل دل کو میرے اس کے بنا آرام نہیں

ڈھونڈتا ہے تو کدھر یار کو میرے ایماہ
منزلش در دلِ ما ہست لبِ بام نہیں

بوالہوس عشق کو تو خانہ خالہ مت بوجھ
اُسکا آغاز تو آسان ہے پر انجام نہیں

پھانسنے کو دلِ عشاق کے اُلفت بس ہے
گہیر لینے کو یہ تسخیر کم از دام نہیں

کام ہو جائے تمام اُسکا پڑی جس پہ نگاہ
کشتہ چشم کو پھر حاجتِ صمصام نہیں

ابر ہے جام ہے مینا ہے می گلگون ہے
ہے سب اسبابِ طرب ساقی گلفام نہیں

ہائے رے ہائے چلی جاتی ہے یوں فصل بہار
کیا کروں بس نہیں اپنا وہ صنم رام نہیں

دل کے لینے ہی تلک مہر کی تہی ہم پہ نگاہ
پھر جو دیکھا تو بجز غصہ و دشنام نہیں

رات دن غم سے ترے ہجر کے لڑتا ہے نیاز
یہ دل آزاری میری جان بھلا کام نہیں

Hazrat Shah Niaz
حضرت شاہ نیاز 


Enter your email address to follow this blog and receive notifications of new posts by email.

Join 919 other followers

Archives

Archives

May 2019
M T W T F S S
« Feb    
 12345
6789101112
13141516171819
20212223242526
2728293031  

Shine On Award

Dragon’s Loyalty Award

Candle Lighter Award

Versatile Blogger Award

Awesome Blog Content Award

Inner Peace Award

Inner Peace Award

Inner Peace Award

Flag Counter

Flag Counter

Bliss

blessings for all

Upcoming Events

No upcoming events