Just Bliss

Posts Tagged ‘forlorn

 

2b4ce848fd4ddcd1b81f62969f50898e

Poet: Iftekhar Bukhari
Translated by: Tanveer Rauf

Before I’m gone astray in missing you
In deep fog of your remembrance
Like any lost star that you look for again
I want to get out of ecstatic shackled time
Remembering you and beautiful spent time
Murmuring in busted words in my dream
I love that time where you come into sight
Your agitated sensation flows in my blood
I try to find solace in night’s isolation
Her solitude scares me of being so afar
As a scared bird in nest in downpour
I can’t give dreadful omen to the mirrors
As they all fall back on me ———–!
I imagine of my death that where I die?
With a forlorn heart on a high mountain
Or anywhere in a shadowy weird corner
Or amidst the frightening ancient graves
Where weary sinners walk bare footed
In search of god and upright way of life
I don’t wish to be laid in a grand tomb
That holds feet of persons walking by
I wish to sleep in darkness of eternity
To let my restive soul at tranquility
The sun sets under white slabs of snow
In a lonely lane in broken down home
Where the moon sheds no tears and
From where thy memory has departed

…………………………………………………..
ہ ہ ہ ہdosri yaad
اس سے پہلے کہ میں ڈوب جائوں
تمہاری جدائی کے بے انت کہرے میں
کسی فراموش ستارے کی طرح
اور تم دوبارہ تلاش کرنے لگو
میرے لکنت زدہ لفظوں کی نیند میں
عہد رفتہ کی گرد آلود آوازیں
جن میں تمہارے خوابوں کے خد و خال بھٹکتے ہیں
میں اس مہذب جہنم سے نجات چاہتا ہوں
جس سے میں محبت کرتا ہوں
جس کی وحشت میرے لہو میں بہتی ہوئی آتش ہے
میں پناہ ڈھونڈتا ہوں رات کی نیلگوں تنہائی میں
جس کا پار درشک خالی پن مجھے لرزا دیتا ہے
بارش میں، گھونسلے میں سہمی ہوئی چڑیا کی طرح
میں آئینوں کو بد دعائیں نہیں دے سکتا
کہ وہ مجھ پر پلٹ آتی ہیں
میں سوچتا ہوں میں کہاں مروں گا
اپنے اداس دل میں کسی بلند پہاڑ پر
یا نشیب میں کسی بھولے بسرے کونے میں
دنیا کی حقیر ترین قبروں کے درمیان
جہاں تھکے ماندے گناہ گار
ننگے پائوں چلتے ہیں خدا کی جانب
میں کسی شاندار مقبرے کا آرزو مند نہیں
جو راہ گیروں کے قدم روک لے
میری پر حسرت روح
فقط ابدی اندھیرے کا آرام چاہتی ہے
سورج کی منجمد لاش کے پاس
برف کی سفید چادروں کے نیچے
ویران گلی میں،
جہاں چاند آنسو نہیں ٹپکاتا
خستہ مکان میں،
جہاں سے تمہاری یاد ہجرت کر چکی ہے
افتخار بخاری

RAIN

Even if we break the tradition

For being getting forlorn

Refrain from loving; then–?

Will there be no rain again??

Weathers won’t transform?

No funfair no amusement ever again?

Will the rain never downpour again ?

Missing someone madly

Will love come to an end?

Will the birds never chant again?

The butterflies will never flutter

On blossoming flowers again

Won’t kids chase butterflies again?

The partridge, to reach the moon

Will fail to remember its direction

Stars will not twinkle in the sky to show

Gentle wind will not enliven the garden

Rising   sun rays won’t caress flowers

The sunrays that sang melody on sea shore

Will no longer hum, thus travelers will mislay

Live and stride aimlessly astray losing their way,

Will fade away unnamed, no one to moan

No one to shed tears in memory, No one to groan

Will the eyes gaze into environs?

After that afar beyond the horizon

Or to search for the hidden away fortune

What if we break the tradition?

For being getting forlorn

Refrain from loving; then–?

 We breathe life the way we like

Or breathe our very last breath

Is no one’s apprehension then!

محبت چھوڑ بھی دیں ہم

[ایک نظم]

چلو گر تنگ آ کر اک روایت توڑ بھی دیں ہم

محبت چھوڑ بھی دیں یم

تو کیا ہوگا۔۔۔۔۔؟

زمیں پر مومسموں کا

پھر کبھی میلہ نہیں ہوگا

نہ برکھا ویسے برسے گی

کہ دل تڑپے کسی کو یا د کرکے پھر

محبت ختم ہوگی کیا۔۔۔۔۔۔؟

گُل و بُلبُل کے قصے

پھر نہیں دۃُرائے گا کوئی

نہ تتلی پھول پر رقصاں کبھی ہوگی

نہ بچے صحن گُلشن میں

بس اک تتلی پکڑنےکےلئے

بے چین یوں ہونگے

چکوری چاند کی چاہت میں

رستہ بھول جائے گی

نہ تارے جھلملا ئیں گے

فلک پر راہبر بن کر

صبا پھر کیا کرے گی آ کے گُلشن میں

طلوُع ہوگا جو سورج

اُس کی کرنیں گُل نہ چومیں گی

لب دریا ہوا جو قصہ مہرو وفا کا

گایا کرتی تھی نہ گائے گی

مُسافر راہ چلتے راہ سے بھٹکیں گے گم ہونگے

جئیں گے پھر یونہیں

بے نام سی  اک زندگی

شاید مریں گے تو بھی

کوئی آنکھ نہ آنسو بہائےگی

محبت ہی نہ ہوگی

جب بھلا آنسو بہیں گے کیوں

مگر آنسو بہیں نہ پھر

بھلا آنکھیں کریں گی کیا ۔۔۔؟

محظ تکتے ہی رہنا دُور تک

خالی خلا میں کیا مقدر میں لکھا ہوگا ۔۔۔۔؟

روایت توڑ بھی دیں ہم

محبت چھوڑ بھی دیں ہم

جئیں پھر ہم کسی کو کیا۔۔۔؟

مریں گے تو بھی کیا ہوگا۔۔۔؟

انور زاہدی

 


Enter your email address to follow this blog and receive notifications of new posts by email.

Join 920 other followers

Archives

Archives

November 2019
M T W T F S S
« Sep    
 123
45678910
11121314151617
18192021222324
252627282930  

Shine On Award

Dragon’s Loyalty Award

Candle Lighter Award

Versatile Blogger Award

Awesome Blog Content Award

Inner Peace Award

Inner Peace Award

Inner Peace Award

Flag Counter

Flag Counter

Bliss

blessings for all

Upcoming Events

No upcoming events