Just Bliss

Posts Tagged ‘bombarded

Image may contain: 1 person, closeup

In memory of innocent children of Qandoz Afghanistan who were celebrating their Quran memorization certificates when bombarded and more than 100 children killed and many wounded.

Eyes shed tears to see massacre of angels

Heart deeply hurt seeing blood on angels

The universe jolted hearing by the weeping of angels

Callous offender didn’t feel pity on angels

Quran enriched hearts cruelly massacred

Knoll and land  felt agony on this massacre

Flames burned and disfigured so ruthlessly

Like grass and trash burned by fire cruelly

The bloodbath may stir negligent to stimulate

May Almighty enlighten them to be vigilant

the valiant and promising youth may rise up

Bringing joy to hearts; richness to brighten up

We must now make a move, never to be rueful

Plains or mountains may not hinder or be rueful

O, God the children who were killed in Qandoz

give patience to parents and lighten their grief

May each soul be elevated to crest in heavens

May their thirst be quenched with water of Kauser

This is just poetry, it’s concern for the homeland

Every grief stirs Fareedi to write for homeland

******

آہ قندوز کے شہیدو !

قُندوز ، افغانستان میں دستار بندی کے موقع پر امریکہ کی بمباری سے شہید ہونے والے ننھے حفاظ وقُراء اور انکے لواحقین کو ،،، درد و غم اور آنسوؤں سے بھرا ہوا نذرانۂ عقیدت …..
شاعر: حافظ محمد سلمان رضا صدیقی فریدی مصباحی

پھولوں کا قتل دیکھ کے آنسو نکل پڑے
سینے میں رنج و درد کے چشمے اُبل پڑے
معصوموں کی پکار سے تھرّائ کائنات
بے شرم حاکموں کی جبیں پر، نہ بَل پڑے
قرآں کے حافظوں پہ ہوا اِسطرح ستم
کوہ و دَمَن بھی دیکھ کے جِسکو، دَہل پڑے
شعلوں نے آہ … پھولوں کو ایسے کیا تباہ
جیسے کہ آگ سے خس و خاشاک جَل پڑے
اِس سانحے سے غافِل و بَدمَست جاگ جائیں
یا رب نِـگاہِ قـوم میں نــورِ عمـل پڑے
ہو جِسکی تازگی سے دِل و جاں میں انقلاب
مِلت کے گلستاں میں وہ پھول اور پھل پڑے
معصوموں کا لہو، اے خدا رائگاں نہ جائے
اعدائے دیں کی جانوں پہ بَرقِ اَجَل پڑے
اب ہم نکل کھڑےہوں ، نہ رکنے کے عزم سے
رستےمیں چاہے دشت ہو ، چاہے جَبَل پڑے
قندوز میں خدایا جو بچّے ہوئے شہید
اُن سبکےوالدین کے سینوں میں ” کَل” پڑے
ہر ایک کا ٹھکانہ بہشت بریں میں ہو
انکی زمین پیاس پہ کوثر کا “جَل ” پڑے
یہ شاعری نہیں ہے ، یہ ملت کا درد ہے
ہرغم پہ اے فریدی، قلم کیوں نہ چل پڑے


Enter your email address to follow this blog and receive notifications of new posts by email.

Join 920 other followers

Archives

Archives

May 2019
M T W T F S S
« Feb    
 12345
6789101112
13141516171819
20212223242526
2728293031  

Shine On Award

Dragon’s Loyalty Award

Candle Lighter Award

Versatile Blogger Award

Awesome Blog Content Award

Inner Peace Award

Inner Peace Award

Inner Peace Award

Flag Counter

Flag Counter

Bliss

blessings for all

Upcoming Events

No upcoming events