Just Bliss

Archive for the ‘Urdu blogs’ Category

19732363_10154648012191932_8013759115126708428_n

 

هم بنے انویجیلیٹر :

میری
کزن نصرت ایک کالج میں لیکچرار کے فرائض انجام دے رهی تھیں۔ وه اکثر کالج سے واپسی پر همارے گهر آجاتیں تهیں کیونکہ ہماری بہت دوستی تھی اور بچپن سے قلبی لگاؤ بهی تها ایک دن وه کالج سے واپسی پر آئیں تو بہت سنجیدگی سے بولیں کہ ان کے کالج میں سینٹر پڑا ہےاگر تم چاهو تو انویجیلیٹ کر سکتی هو گهر سے زیاده دور بهی نهیں هے اور کچھ پیسے بهی مل جائیں گے جتنے دن جاؤ گی ، میں نے خوشی خوشی حامی بهر لی. مقرّره دن میں کالج گئی اور وهاں مجهے ایک کلاس میں بهیج دیا گیا. وهاں کی منتظم ٹیچر نے مجھ سے بہت رعب سے کہا که دیکهیں کوئی لڑکی نقل نه کرے. آپ کو بہت ﺫمّه داری سے چیک کرنا هے ، یه کام آسان نهیں هے . آپ کو کلاس میں راؤنڈ لیتے رِهنا هوگا. جن آنکهوں سے وه همیں گهور کر دیکھ رهیں تهیں ان پر اپنا پهسلتا ہوا چشمه ٹکا کر کَهٹ کَهٹ کرتی چلی گئیں. ان کے جانے کے بعد هم نے بهی اسی رعب سے لڑکیوں سے مخاطب هو کر کہا که جو بهی اپنے ساتھ نقل کے لیئے پهرّے لائیں هیں وه خود لا کر میری میز پر رکھ دے کیونکه مجهے کسی کی تلاشی لینا پسند نهیں هے.
اکثر نے تمیز سے اپنے پھرّے میز پر لاکر رکھ دئیے۔ یہ تو مجھے معلوم تھا کہ اگر دو پرچیاں میز پر رکھی ہیں تو چار ان کے پاس ہوں گی لیکن بھروسہ بھی کوئی چیز ہے ۔میں نے کسی کی تلاشی نہیں لی ۔ سب اپنا پرچہ حل کرنے میں مصروف تھیں ۔ میں کلاس میں چکر لگا رہی تھی اور ہر دفعہ ایک لڑکی کو دیکھتی کہ وہ میز پر سر ٹکائے ہوئے پرچہ حل کر رہی ہے ۔میں ہردفعہ اسے کہتی بیٹا آنکھوں پر برا اثر پڑے گا ، سر اٹھا کر لکھو۔میرے کہنے سے وہ سر اٹھا لیتی مگر پھر جب میر ی نظر پڑتی تو وہ اسی طرح سر ٹکائے ہوئے ہوتی ۔ آخر مجھ سے رہا نہ گیا اور اس کے پاس جا کر وجہ پوچھی تو اس نے بتایا ، گھر کی ساری ذمّہ دار ی اس پر ہے ۔ رات بھر جاگ کر پڑھا صبح بھی پیپر تھا جو رہ گیا تھا اور دوپہر میں بھی ۔ ناشتہ کا میں نے پوچھا تو بولی ،نہیں کِیا۔ سر میں اتنا شدید درد ہے کہ سر اٹھایا نہیں جارہا ۔میں سن کر اپنی سیٹ پر آگئی پھر پانی والے کو پیسے دیئے کہ ایک فائنٹا اور بسکٹ کا پیکٹ لا دے ۔ میں نے اس لڑکی کو فائنٹا اور بسکٹ دئیے کہ پیپر چھوڑو پہلے یہ کھاؤ۔ کھانے کے بعد اس نے تھوڑی دیر بعد سر اٹھا کر پیپر دیا۔ پیپر ختم ہونے کے بعد اس نے مجھے پیسے دیئے تو میں نے اس کو بتایا نہ تو میری یہاں کینٹین چلتی ہے نہ فائنٹا والوں سے میں نے ٹھیکہ لیا ہے ۔ تم میری بیٹی جیسی ہو۔ جاؤ اور ناشتہ ضرور کرکے آیا کرو تاکہ سر میں درد نہ ہو اور پیپر بھی آرام سے کر لو۔ اگلے دن پھر میں مقرّرہ وقت پر کالج پہنچ گئی۔ جب لڑکیاں کلاس میں اپنی اپنی نشستوں پر بیٹھ گئیں تو ایک نہایت سخت قسم کی ٹیچر اس طرح کمرے میں داخل ہوئیں جیسے دشمن کی فوج کو للکارنے آئی ہیں ۔ گرجدار آواز میں دھماکہ کیا کہ : لڑکیو!جو جو پھرّے لائی ہو فوراً میز پر رکھ دو ورنہ میں نے تلاشی لی اور اگر کچھ نکلا تو۔۔۔۔ یہ کہتے ہوئے ان کا لب ولہجہ ایسا ہی تھا جیسے واقعی گولیوں سے بھون ڈالیں گی ۔ ان کا سراپا اور پهر اس کرخت لہجے سے خوف زدہ ہوکر کافی لڑکیوں نے پڑھنے میں کم اور پهرّے بنانے میں جو محنت کی تھی وہ لاکر دشمن کے سامنے اپنے ہتھیار جمع کرادئیے۔ وہ مجھے بھی گھور کر گویا ہوئیں کہ دیکھیئے کوئی لڑکی نقل نہ کرے اور اگر ایسا ہوا تو آ پ کی بھی سرزنش ہوگی ۔ میں نے انتہائی انکساری سے ان کی تائید کی ۔ یہ کہہ کر وہ اونچی ایڑی کی سینڈل سے کَھٹ کَهٹ کرتی چلی گئیں۔ دور تک ان کی کَھٹ کَھٹ سنائی دیتی رہی ۔ لڑکیوں نے اور میں نے گہرا سکون کا سانس لیا۔مجھے تو امتحانوں میں بچوں پر بہت پیار آتا ہے اور میں اپنے شاگردوں پر اتنا بھروسہ کرتی تھی کہ کہتی کہ دیکھو مجھے آپ پر یقین ہے کہ اگر کتاب کھلی بھی ہوگی تو میں جانتی ہوں آپ نقل نہیں کریں گے ۔ محنت کر کے فیل ہوجانا بری بات نہیں ہے جتنا نقل کر کے اچھی پوزیشن لے لینا اور میں کلاس سے باہر چلی جاتی تھی کہ بچے یہ نہ سمجھیں کہ صرف باتیں کرتی ہیں اور جب اچانک کلاس میں آتی تھی تو روحانی خوشی ہوتی کہ سب بچے اپنے پیپر میں مصروف ہوتے ۔ مجھے کسی بچے نے شرمندہ کیا نہ مایوس ۔ میں بہت خوش نصیب ہوں .. یه کہاں سے کہاں آگئے ہم بات کرتے کرتے ۔
بات ہورہی تھی دوسرے دن کی ، لڑکیوں پر نظر رکھنے کی ۔ اس دن اسلامیات کا پرچہ تھا۔ میں نے لڑکیوں سے کہا کہ دیکھو آج زیادہ کڑا امتحان اس لئے بھی ہے کہ اسلامیات کا پرچہ ہے نقل کرنا ویسے بھی غلط ہے اور آج تو ایمان کا بھی امتحان ہے ۔ اسلئے جہاں سمجھ نہ آئے تو مجھ سے پوچھ لینا مگر نقل نہ کرنا۔ سر میں درد والی لڑکی بھی موجود تھی مگر ہشاش بشاش تھی۔ میں جانتی ہوں متوسط گھرانوں کی لڑکیوں پر گھر داری کا بھی بہت بوجھ ہوتا ہے ۔ نہ ٹیوشن پڑھ سکتی ہیں نہ کوئی سمجھانے والا ہوتا ہے ۔اس لئے پھرّے بناتی ہیں۔ وقت اور توانائی ضائع کرتی ہیں ۔ میں ہاتھ دیکھ کر پہچان لیتی ہوں کہ کتنے محنت کش ہیں اس لئے بہت ہمدرد ی رکھتی ہوں اور یہی ہوا۔ معروضی پرچے میں بہت سی لڑکیوں نے مد د کے لئے ہاتھ اٹھایا تو میں نے بجائے ایک ایک کو بتانے کے پوری کلاس کو “خالی جگه ” ( Fill in the blanks) ڈکٹیٹ کروا دیئےاور یوں کلاس کا ایمان سلامت رہا ، جہاں تک همارے ایمان کی بات هے تو اللّٰه تو سب کی نیّتوں اور دلوں کے بهید تک سے واقف هے، بس اللّٰه پاک سے معافی کے طلبگار هیں بے شک اللّٰه تعالٰی عفوودرگزر کرنے والا هے .

جب اگلے دن نصرت کو بتایا توانہوں نے کہا بس کردو بس! تم مجهے کالج سے نکلواؤ گی خبردار جو اب تم گئیں کالج ۔ گھر بیٹھو اور بچے پالو ۔کسی کام کی نهیں هو تم ، هم نے کونسا برا مانا کیونکه کہہ تو وه ٹهیک هی رهیں تهیں. بہرحال دودن کے جو پیسے ملے تھے ان سے خوب موج اڑائی دونوں نے مل کر.

Advertisements

 

me in green

Hum aur hamari Urdu
Hamaray waledain ka ta’aulq tu UP se tha magr India se azadi k baad apnay watan Pakistan aai.    Lala Musa se Pindi, phir Karachi hote huwe bilakhir Peshawar mei sakoonat ikhtiyaar ki. Peshawar se dono ka khameer utha tha is leye mitti unko waha khench lai. Dono ki aakhri araam gah bhi Peshawar he me hay.
Peshawar cantt 62 Mall Road per hamaray gher k itraaf mai koi paas paros nahi tha. Is leye mohalladari kay mazay na le sakay. Na larai jhugra, na chughal khori na khuwahish na shikwa,na ehsaas e bertari na kamtari. Na fashion ka pata. Jo maa ne pehna diya pehen liya.  Ajeeb pursakoon mahol tha.  Hum umer bhai behen bhi nahi tha jis se kuch tu seekhnay ko milta. Baray bhai bhi 20 saal umer mei baray thay. Wo tu bus piyaar aur shafqat ka ghana shajr- e- saya daar thay. Iss tumheed ka matlab sirf yeh ha batanay ka kay in wajuhaat ki waja se hum per CP.UP, HAIDERABADI, BIHARI, PUNJABI HINDKO, BENGALI ka koi rung na churh saka.
Khidmat guzaron kay bacho ko Urdu aati nahi thi is leye un  se Pushtu bolni zaroor sekh li. Saat bhaiyun mei hamaray bhai zinda bachay they lehaza maa ki aankhon ka nor aur dil ka saroor they. Jub wo office kay kaam se kai dino k leye  doosray shehr jatay tu ammi fikrmund rehtein. Uska hul unhon ne aakhir nikal he liya. Hum us waqt class one mei thay.
 Ammi  bhai ko khut likhwana chahti thein. Ub bhala hum kiya jaanein khut (letter) likhna.  Jub koi lufz likhna na aata tu kehtein jo lufz nahi likhna wo kitaab me dhoondo. Is taraha hijjay bhi agai aur lufzon se bhi dosti honay lagi. Ammi ne is per bhi iktefa na kiya. Unhon ne hum masoom se Shama novel perhwana shru kiya. wo zamana aisa tha k bachon k pass sirf tabaydari kernay  kay aur koi option nahi hota tha. Novel tu kiya khaak samjh mei ata bus perhte aur ammi khush hotien k khut likhna aura acha ajaiga humko. Is tarah urdu perhnay mei rawani aati gai, sheen qaaf bhi durust hogaya. Bulund khuwanai aur thereer dono he behter hoti gaein.
Is mushaqqat ka faida yeh huwa k school aur college me maqami aur All Pakistan mubahison mei teachers ki nazar hum per pernay lagi. Hum bhi khush k chalo muft mei doosray shehron  mei ghoomany ka maza aai ga. Lerkon ko hum mei koi dilchaspi thi aur na humko. RCD debate yani Pakistan, Iran aur Afghanistan kay  ma-bain debate ka muqabla tha aur wo bhi Islamia college mei. Waha lerkiyan jatay huwe ghubrati thei ek tu purdah aur wese bhi haseen. Humko koi der tha nahi, na lerkon se na husn ki kami se. Rostrum hamseha hamaray qud se ooncha he hota ha her jagah is leye hum bedharak stage kay centre mei jaker apna mudda bayan kerte chay muwafiqut mei ho ya mukhalifat mei.
 Khoob inamaat, trophies aur certificates hasil keye.
Presentation Convent ki taliba honay ki waja  se English bhi qabu agai. Lehaza dono zabano mei khoob sadakari ki.
Shadi kay baad jahez mei hum bori bher ker apne cups bhi Jhelum le gai. Naya gher girahsti sambhali. Bawerchi khanay mei masalay rukhnay kay leye koi dabba bottle thi nahi. Hamaray urdali ne foren apni foji zihanut ka istemal kerte huwe bori se hamaray cup nikalay aur un mei namak mirch masalay bher deye. Pus ai momino is se sabit howa kay foji kay pass her maslay ka hul hota hay sirf dimagh istemal kerna shert ha. Bus yeh huwa k wo cups jo hum ne mehnat se jeetay thay unki betoqeery dekh ker apni betuqeeri dekh ker aankhon mei aansu aur labon pe muskarahat aanay k sath dil se hook uthi kay—- derd itna hay k her rug mei mehsher burpa—–sakoonitna ha k merjanay ko ji chata hay ———-Tanveer Rauf 23 November 2015

 

images

Jaagnay ki raat hay, sonay bhi nahi dete

Islam se hamara riwaiti taaluq kabhi bhi nahi  raha, jis kay leye aap sub suunay perhnay se intehai maazrut! Ub chahe tu maaf kerdein chahye sarzanish mager koi faida nahi is leye ub is umer mei kiya khaak muslamna hongei——

Hamari turbiyut mei mazhab ka amal dakhal nahi raha. Gher mei bhi  achay buray ki tameez sikhai gai aur yehi zehen mei bitha diya gaya k jhoot sub buraiyun ki jar hay, kisi ki aah lena acha nahi Allah naraz hota hay, chori bayemani bhi buri baat ha, yani Islam ki taalimaat se aarasta tu kiya gaya magr Islam aur Allah se daraya kum gaya aur  piyaar kerna zada sikhaya gaya.  kin baaton se WO khush hota ha. kitabon aur aqwaal ne mazzed jila di aur phir school bhi convent tha wahan bhi Christianity ya Islam ka naam nahi liya gaya bulk ay achha insan bunnay ki targheeb di gai. Hamari Parsi teacher Miss. Gai ne ek dafa yeh dekhne k baad ki jamadar se hum naak bhon cherha ker baat kerte hein kaha k dekho yeh jamadar both noble class ha inki izzat kiya karo. Hum jo gundgi phelatay yeh log usko saaf kerte ehin. Agar jamadar na hoon tu dunya ghilazat ka dher bun jai. Hum se zada yeh log qabil e tehseen hein. Bus usi din se humara rawwaya badal gaya.

Phir gher mei discipline bhi tha. Raat ko jaldi sona subh jaldi uthna. Hum ne kabhi raat jag kern a imtehan ki tayyari ki aur na raaton ko film dekhi. Hudd tu yeh hay kay shadi wali raat bhi hum ne kaha k bhai subha baat kerna yeh hamara sonay ka waqt ha.

Paas paros koi tha nahi, na behen na humjoli, na rishta daar tu janab hoshyari, chalaki ya bahana bazi na seekh sakay.

Is taweel tumheed ka matlab both jaldi aap smajh mei ajai ga.

Shadi hoi tu aik foji se. wo bhi seedha saadha shreef admi tha. Junglon, biyabaano ya chaowni (cantt) mei rehna huwa.

Apni shadi se pehle koi shadi nahi dekhi thi is leye dunyadari aur rasoomaat se nawaqfiyut he rahi.

Jub hum Hum Karachi aai tu Karachi hamaray leye ek ajaib gher tha. Alice in wonderland ki tarah mugta tha. Itni ronaq kabhi na dekhi thi. Zindgi both khoobsoorat lugti thi.

Mukhtasir yeh kay shohar kay inteqaal k baad 4 bachon ki zimma dari aagai. Baap ki shafqat aur maa ka piyaar dono dena tha.

Shab- e- qader k baray mei bachpan se suna tha kay ibadut wali khaas raat hoti ha. Farishtay zameen pe utarte hein, agar kisi gher mei kutta ho ya tasveer ho tu wo nahi aatay aur berkat uth jati ha.

Ub aai shab e barat. Kutta tu nahi tha lekin tasveerien both thein. Sham se he bachon se kehna shru kiya ka gher achi tarah saaf kro, tasveerien utaro, sufaid chandni bichao aaj shab -e -qader ha ibadut ki raat ha. Mei ne thora sa hulwa pakaya tha jo chund gharon me bhej diya. Mager mohallay se her gher se hulwa aya. Ub kiya karoon kon khai ga itna hulwa. Mei ne ek gher ka hulwa dosray k gher aur isi tarah sub gharoon mei ek dosray ka hulwa bhej diya. Ek gher mei Khatoon ne bilal se kaha k tumhari ammi ne hulwa tu both accha pakaya ha. Wo bhi jhoot nahi bolta. Bola, “aunty, ammi ne subka hlwa idher udher bhej diya hay.” Wo both mehzooz hoien aur mujhe baad me bataya.

Ub sham gehri hoi. Bacho ne kuch der tu tasbeeh perhi phir khel kood mei lug gai. Bhaanjay bhanjiyaan bhi aai hoi thei. Jub raat kay 10 bajae tu humko need ne jhanjora. Kuch der aur guzri tu saber ne burdasht ka damun chor diya. Hum ne both zor se bachon ko daanta kay, aaj itna shor ker rai ho. Aaj ki raat ibadut aur jaagnay  ki raat ha, mujhe sakht neend aria ha, tum log sonay bhi nahi dete, chalo sipara perho

Us waqt to bachay sehm gai aur apna apna sipara le ker beth gai mager wo jumla meri shanakht bun gaya hay J

Kay jaagnay  ki raat ha sonay bhi nahi dete

Ub bhi her saal tamam shab -e -qader ko sub kehte hein k bhai jaagnay ki raat ha inko sonay do

Aap jo chahe sochein hum tu aise he hein

Hunsye, mazaq uraye magr bud dua na dejeye ga

12910290_10153548662965745_331473171_n
Yun di mujhay azadi kay mei hoi hairaan— ai zindagi tera ehsaan hay ehsaan.
Hum bachapan se pachpan bhi cross ker chukay bul kay Allah jhoot na bulwai ub tu 65 saal kay hogai aur   66 mei lug chukay hein magr ub tuk samjh, aqal aur hoshyari se hanoz bohat he door asat ——- 🙂
Her aik ki baat pe yaqeen kerna, phir uss se dhoka khana aur baar baar usi se dhoka khana ku kay us becharay/ bechari ne wada jo ker liya tha k ub wo sahi hogaya/ hogai hay—-
magr janab yeh tu mashoor e zamana baat hay k chor chori se jai hera pheri se na jai su, Wo apni khu na chorein ge, hum apni wazah ku badlein kay misdaaq zindagi guzar rai ha aur kuch baqi hay wo bhi isi tarah guzar he jai gi—aray bhaee akhir ko hum kitna aur bewaqoof banein ge aur log kitna sitam dhaein ge 🙂
Lekin ub jo hamara waasta la shaoori tor per para hay wo kher se danish-munada gaan se para hay—– hum ek dafa phir iss yaqeen se us mei shamil hogai  kay kum uz kum yahan dhoka, jhoot, khushamad aur giroh bundi nahi hogi—— magar sahib is qabeelay mei bhi insaan he hein wo bhi aaj supersonic daur kay tu yaha bhi yeh sub attam mojod hay.
Akseriyut yaha lufzon kay sodagaron ki hay jo sirf khoobsoorat lufz bechtay hein, muttasir kernay ki bhi koshsish kerte hein magar yaqeen jaanye boht kum aisay likhnay walay log hein jin ka likha huwa lufz dil per asar kerta hay werna foto khichwanay kay siwa un mein koi khoobi nahi.
kuch ursa pehle he ek haadasy ne sub ki qalai khol di. Wo jo boht aala maqam per brajman thay is qabeela mei wo insaniyut, akhlaq, hamdardi aur murawwat ka sirf perchaar tu ker tay hein magar amal khaak nahi——– isi leye humko yeh sher un kay  hasb e haal lugta hay kay
—-Khaak se banay insaan mei agar khaaksari nahi tu—-unka insan hona na hona bhi khaak hay
Chuna chay hum ne is qabeelay ka naam Bunjer Qabeela rukh diya ha jaha phool nahi khiltay, khushbu fizaah ko mehmaiz nahi kerti jahan mohabbat ki heryali nahi, khuloos ki halawat nahi bul kay  sirf tassanu, raoonatstyle, dikhawa, masnoi muskarahat, kadoorat, banawat aur giroh bundi k siwa kuch nahi—– jo waqai danishwer hein wo samjh jaien ge aur meri baat pe yaqeen bhi krein ge— kisi ki dil shikni mera maqsad nahi hay bul kay apni nai nasal ko aagahi dene ki koshsih ker rai hoon kay agar woh likhnay kay maidan mei aien tu intehai khuloos k sath aien ku likhay huwe lufz merte nahi wo aapka peecha kerte hein aur ek waqt me saamany aa ker kharay hojatay hein
Ai Perwerdigaar humko hidayut de, hum teri raza mei razi hein aur Tu hum se razi hoja-ameen

Enter your email address to follow this blog and receive notifications of new posts by email.

Join 907 other followers

Archives

Archives

October 2017
M T W T F S S
« Sep    
 1
2345678
9101112131415
16171819202122
23242526272829
3031  

Shine On Award

Dragon’s Loyalty Award

Candle Lighter Award

Versatile Blogger Award

Awesome Blog Content Award

Inner Peace Award

Inner Peace Award

Inner Peace Award

Flag Counter

Flag Counter

It looks like the WordPress site URL is incorrectly configured. Please check it in your widget settings.

Bliss

blessings for all

Upcoming Events

No upcoming events