Just Bliss

Friend! It’s like this

Posted on: September 28, 2019


‪with names images of gems‬‏ کیلئے تصویری نتیجہ

Friend! It’s like this
Stones have their own sphere
They’re valued with atomic numbers
The museum in Washington gallery
There’s a precious stones gallery
There’s a necklace of some queen
A crown of king renowned
Exquisite earrings of a princess
And, valuable chain of a prince
The exquisite collection brilliance
All around the ambiance
The diamond dazzling the eyes
The stunning sapphire grip the eyes
The crimson ruby-like beloved lips
Appealing to be cherished
The green emerald refreshing
The eyes of the beholder
My friend sharing price and atomic number
Of every gemstone placed there
The supremacy illuminates
In radiance of each gemstone
Everywhere in Capital Hill building
Where whispers of nameless workers
Echo on the tall majestic pillars
The great scholar Ali Shariati heard
That thousands of buried slaves
Weeping In the gigantic Pyramids
Unseen, unheard and, unremarked
The naïve tourists see pyramids
In thorough wonder
Yes, my friend!
Same is the story of priceless stones
Slavery has been decided to be sold
Slaves traded even today
Regardless of gain or pain, they’re sold
IMF’s checkbook and cruise missile
The code bearing slaves will
Be marked with atomic numbers

………………

“ہاں دوست ایسا ہی تھا “
پتھروں کی اپنی ایک دنیا ہوتی ہے
ان کے اٹامک نمبر ز سے
ان کی قیمت کا اندازہ لگایا جاسکتا ہے
واشنگٹن کے عجائب خانے میں
قیمتی پتھروں کی گیلری ہے

کسی ملکہ کا نیکلس
کسی بادشاہ کا تاج
کسی شہزادی کے آویزے
اور
کسی رئیس زادے کی مالا رکھی ہوئی ہے
جن کی چمک سے سارا ماحول
بقعہ نور بن چکا ہے
ہیرے کی چمک آنکھوں کو چکا چوند کر رہی ہے
نیلم کی نیلاہٹ نظر کو ساکت کر چکی ہے
یاقوت کی سُرخی
محبوب کے سرخ ہونٹوں کی طرح
بوسے کی طرف مائل کر رہی ہے
زمرد کی سر سبزی
دیکھنے والے کو شاداب نظر کر رہی ہے

میرا دوست مجھے
ہر پتھر کی قیمت اور اس کا اٹامک نمبر بتا رہا ہے
پتھروں کی چمک میں تکبرانہ مسکراہٹ ہے

کیپٹل ہل کی عمارت کے ہر گوشے میں
سرگوشیاں گونج رہی ہیں
وہ بلند و بالا ستون
جن پر گمنام غلاموں کے دستخط ہیں
وہی بے زبان نشان گونج رہے ہیں

اسی طرح
میرے عظیم مفکر شریعتی نے
سنا تھا کہ اہرام مصر کی آغوش میں
ہزار ہا مزدور قبروں میں رو رہے ہیں
اور بہرے تماشائی تماشا دیکھ رہے ہیں
ہاں دوست !
تمام بے قیمت پتھروں کی کہانی ایک سی ہے
غلامی کے شعبے کی نجکاری ہوچکی ہے
غلام آج بھی بِک رہے ہیں
تمام سود و زیاں سے عاری غلام بک رہے ہیں
آئی ایم ایف کی چیک بُک
اور کروز میزائل
ان کوڈ بردار جنس کے اٹامک نمبر کو طے کریں گے
………………
. Poet: Tasnim Abidi
Translator: Tanveer Rauf

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google photo

You are commenting using your Google account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Enter your email address to follow this blog and receive notifications of new posts by email.

Join 920 other followers

Archives

Archives

September 2019
M T W T F S S
« Feb   Nov »
 1
2345678
9101112131415
16171819202122
23242526272829
30  

Shine On Award

Dragon’s Loyalty Award

Candle Lighter Award

Versatile Blogger Award

Awesome Blog Content Award

Inner Peace Award

Inner Peace Award

Inner Peace Award

Flag Counter

Flag Counter

Bliss

blessings for all

Upcoming Events

No upcoming events

%d bloggers like this: